غیر کی آگ میں جلنا کیا  ۔۔۔اپنی آگ میں جل کر دیکھ

غیر کی آگ میں جلنا کیا  ۔۔۔اپنی آگ میں جل کر دیکھ
غیر کی آگ میں جلنا کیا  ۔۔۔اپنی آگ میں جل کر دیکھ

  

ڈھلتی شام میں ڈھل کر دیکھ

 دل کے ساتھ مچل کر دیکھ 

غیر کی آگ میں جلنا کیا 

اپنی آگ میں جل کر دیکھ

راہِ محبّت کیسی ہے

چار قدم تو چل کر دیکھ

رقص کریں گے پروانے

شمع کی صورت جل کر دیکھ

دل کی لگی کہتے ہیں کسے؟ 

اپنے دل کو مسل کر دیکھ 

چاند کی صُورت دُور نہ رہ

آنگن میں توڈھل کر دیکھ

جعفری زیست آسان نہیں

طوفانوں میں پل کر دیکھ

کلام :ڈاکٹر مقصود جعفری(اسلام آباد)

مزید :

شاعری -