حقیقت میں بندہ بھی بننا نہ آیا  سمجھتے ہیں دل میں خدا ہو گئے ہم ۔۔۔۔داستان معروف شاعر سراج لکھنوی کی

حقیقت میں بندہ بھی بننا نہ آیا  سمجھتے ہیں دل میں خدا ہو گئے ہم ۔۔۔۔داستان ...
حقیقت میں بندہ بھی بننا نہ آیا  سمجھتے ہیں دل میں خدا ہو گئے ہم ۔۔۔۔داستان معروف شاعر سراج لکھنوی کی

  

تحریر : آغا نیاز احمد مگسی

آنکھیں کھلیں تو جاگ اٹھیں حسرتیں تمام

اس کو بھی کھو دیا جسے پایا تھا خواب میں

 آج ہم آپ کو اردو کے مشہور و معروف شاعر سراج لکھنوی کی داستانِ فن مختصراً سنائیں گے۔ سراج لکھنؤ میں 1894ء کو پیدا ہوئے ،والد کا نام شیخ نورالحسن تھا ، چرچ مشن ہائی سکول میں تعلیم حاصل کی اس کے بعد محکمۂ امداد باہمی (کو آپریٹو سوسائٹیز) میں ملازم ہوگئے اور ساری عمر اسی محکمہ سے وابستہ رہے۔شاعری کا آغاز1908ء میں کیالکھنؤ کی شعری وادبی روایت سے کسب فیض کیا لیکن آپ کی شاعری لکھنؤ کے روایتی مضامین اور زبان ومحاورے سے آگے نکلی ہوئی معلوم ہوتی ہے۔ سراج کی غزلوں میں روایتی موضوعات بھی ایک تازہ تخلیقی تجربے کی شکل میں وارد ہوئے ہیں۔ اس کے علاوہ سراج کے یہاں زندگی کا ایک بالکل منفرد تخلیقی ادراک نظر آتا ہے۔تصنیفات میں شعلۂ آواز  (شعری مجموعہ)-1920ء  قابل ذکر ہے ۔

 سراج لکھنوی کے یوم وفات پر تاریخ میں دو حوالے ملتے ہیں ریختہ پر  تاریخ وفات 31 جنوری 1968ء درج ہےجب کہ مالک رام کی کتاب تذکرۂ معاصرین جلد اول میں تاریخ وفات 23 جنوری 1968ء درج ہے۔  

سراج لکھنوی کے کلام میں سے انتخاب  ملاحظہ کیجیے

تجھے پا کے تجھ سے جدا ہو گئے ہم 

کہاں کھو دیا تو نے کیا ہو گئے ہم 

محبت میں اک سانحا ہو گئے ہم 

ابھی تھے ابھی جانے کیا ہو گئے ہم 

محبت تو خود حسن ہے حسن کیسا 

یہ کس وہم میں مبتلا ہو گئے ہم 

یہ کیا کر دیا انقلاب محبت 

ذرا آئینہ لا یہ کیا ہو گئے ہم 

حقیقت میں بندہ بھی بننا نہ آیا 

سمجھتے ہیں دل میں خدا ہو گئے ہم 

قیامت تھا تجھ سے نگاہوں کا ملنا 

زمانے سے نا آشنا ہو گئے ہم 

نہ راس آئیں آخر ہمیں ٹھنڈی سانسیں 

عجب ساز تھے بے صدا ہو گئے ہم 

تصور میں بل پڑ گئے ابروؤں پر 

یہ کس بے وفا سے خفا ہو گئے ہم 

گداز محبت ہمیں دل بنا دے 

بس ایک آنچ اور آبلہ ہو گئے ہم 

کبھی بزم ہستی کی رونق ہمیں تھے 

سراجؔ اب بجھا سا دیا ہو گئے ہم 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عجب صورت سے دل گھبرا رہا ہے 

ہنسی کے ساتھ رونا آ رہا ہے 

مجھے دل سے بھلایا جا رہا ہے 

پسینے پر پسینا آ رہا ہے 

مروت شرط ہے اے یاد جاناں 

تمناؤں کا جی گھبرا رہا ہے 

مری نیندیں تو آنکھوں سے اڑا دیں 

مگر خود وقت سویا جا رہا ہے 

ادب کر اے غم دوراں ادب کر 

کسی کی یاد میں فرق آ رہا ہے 

یہ آدھی رات یہ کافر اندھیرا 

نہ سوتا ہوں نہ جاگا جا رہا ہے 

ذرا دیکھو یہ سرکش ذرۂ خاک 

فلک کا چاند بنتا جا رہا ہے 

سراجؔ اب دل کشی کیا زندگی میں 

بہ مشکل وقت کاٹا جا رہا ہے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر لغزش حیات پر اترا رہا ہوں میں 

اور بے گناہیوں کی قسم کھا رہا ہوں میں 

ناز آفریں مرا بھی خرام نیاز دیکھ 

محشر میں مسکراتا ہوا آ رہا ہوں میں 

ہر اشک‌ دل گداز مے نو کشیدہ ہے 

ساغر سے شعلہ بن کے اڑا جا رہا ہوں میں 

ضرب‌ المثل ہیں اب مری مشکل پسندیاں 

سلجھا کے ہر گرہ کو پھر الجھا رہا ہوں میں 

چلتا ہے ساتھ ساتھ زمانے کے کیا کروں 

رخ پر ہوا کے بہتا چلا جا رہا ہوں میں 

سب رشتے اب تو ٹوٹ چکے صبر و ضبط کے 

انگڑائیوں کو روک اڑا جا رہا ہوں میں 

ہاتھوں سے چھوٹنے کو ہے اب دل کا آئینہ 

تم تو سنور رہے ہو مٹا جا رہا ہوں میں 

کیا فائدہ زمانے سے ٹکراؤں کیوں سراجؔ 

خود اپنے راستے سے ہٹا جا رہا ہوں میں

اشعار ملاحظہ کیجیے

۔۔۔۔۔۔

آپ کے پاؤں کے نیچے دل ہے

اک ذرا آپ کو زحمت ہوگی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہاں ہیں آج وہ شمع وطن کے پروانے 

بنے ہیں آج حقیقت انہیں کے افسانے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاں تم کو بھول جانے کی کوشش کریں گے ہم 

تم سے بھی ہو سکے تو نہ آنا خیال میں 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ آدھی رات یہ کافر اندھیرا 

نہ سوتا ہوں نہ جاگا جا رہا ہے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس سوچ میں بیٹھے ہیں جھکائے ہوئے سر ہم 

اٹھے تری محفل سے تو جائیں گے کدھر ہم 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عشق کا بندہ بھی ہوں کافر بھی ہوں مومن بھی ہوں 

آپ کا دل جو گواہی دے وہی کہہ لیجئے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آگ اور دھواں اور ہوس اور ہے عشق اور 

ہر حوصلۂ دل کو محبت نہیں کہتے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قفس سے دور سہی موسم بہار تو ہے 

اسیرو آؤ ذرا ذکر آشیاں ہو جائے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اک کافر مطلق ہے ظلمت کی جوانی بھی 

بے رحم اندھیرا ہے شمعیں ہیں نہ پروانے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نماز عشق پڑھی تو مگر یہ ہوش کسے 

کہاں کہاں کئے سجدے کہاں قیام کیا 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس دل میں تو خزاں کی ہوا تک نہیں لگی 

اس پھول کو تباہ کیا ہے بہار نے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دم گھٹا جاتا ہے محبت کا 

بند ہی بند گفتگو ہے ابھی 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیا ہے درد تو رنگ قبول دے ایسا 

جو اشک آنکھ سے ٹپکے وہ داستاں ہو جائے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آنکھوں پر اپنی رکھ کر ساحل کی آستیں کو 

ہم دل کے ڈوبنے پر آنسو بہا رہے ہیں 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آہ یہ آنسو پیارے پیارے 

لکھ دے حساب غم میں ہمارے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر نفس اتنی ہی لو دے گا سراجؔ 

جتنی جس دل میں حرارت ہوگی 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدا وندا یہ کیسی صبح غم ہے 

اجالے میں برستی ہے سیاہی 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سجدۂ عشق پہ تنقید نہ کر اے واعظ 

دیکھ ماتھے پہ ابھی چاند نمایاں ہوگا 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات بھر شمع جلاتا ہوں بجھاتا ہوں سراجؔ 

بیٹھے بیٹھے یہی شغل شب تنہائی ہے 

مزید :

ادب وثقافت -