الیکشن کمیشن افسران ووٹر لسٹوں کے عوض لاکھوں روپے کمانے لگے

الیکشن کمیشن افسران ووٹر لسٹوں کے عوض لاکھوں روپے کمانے لگے

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) الیکشن کمیشن کے بعض افسروں نے کرپشن کی نئی راہ تلاش کرتے ہوئے ووٹر لسٹیں فراہم کرنے کے عوض امیدواروں سے مبینہ طور پر لاکھوں روپے بٹور لیے۔ملک کے کئی ڈسٹرکٹ الیکشن افسروں اور ان کے ماتحت عملے نے مبینہ طور پر ووٹر لسٹوں کو ناجائز آمدن کا ذریعہ بنا لیا۔ قومی و صوبائی اسمبلی کے 12ہزار 5سوسے زائد امیدواروں نے حلقے کی ووٹر لسٹوں کے لیے ڈسٹرکٹ الیکشن افسروں سے رجوع کیا جس پر الیکشن کمیشن نے ووٹر لسٹوں کی سادہ فوٹو کاپی اور تصویر کی حامل ووٹرلسٹ کی کاپی اور سافٹ کاپی دینے کا وعدہ کیا تاہم بعض افسران نے امیدواروں کو مطلوبہ ووٹرلسٹوں کی فراہمی کے لیے رقم کی ادئیگی شرط رکھ دی۔کمیشن نے تصویر کی حامل ووٹر لسٹ کے لیے ہر صفحے کے عوض 5 روپے کا ریٹ مقرر کیا جب کہ سافٹ کاپی کی صورت ووٹر لسٹ کے لیے ہر صفحے کے عوض 10روپے ریٹ رکھ دیا۔ کمیشن نے سادہ فوٹو کاپی کے لیے 2 روپے کا ریٹ طے کیا۔ ڈسٹرکٹ الیکشن افسر اور ان کا عملہ سادہ کاپی کے عوض 3 سے 5 روپے فی صفحہ جبکہ تصویر کی حامل ووٹر لسٹ کی کاپی کے عوض 6 سے 8 روپے فی صفحہ وصول کرتے رہے۔ اسی طرح افسر اور ان کا عملہ سافٹ کاپی کے ہر صفحے کے عوض 11 سے 12 روپے وصول کرتے رہے۔ سافٹ کاپی کی ووٹر لسٹ کے لیے 8 ہزار روپے کی یو ایس بی بھی امیدوار کو خریدنا پڑی۔ڈسٹرکٹ الیکشن افسروں نے سادہ کاپی خود کرواکر دی جبکہ تصویر کی حامل اور سافٹ کاپی کے لیے نادرا کو لکھ کربھیجا۔ نادرا نے تصویر کی حامل اور سافٹ کاپی کی ووٹر لسٹوں کی فراہمی کے لیے ہر درخواست پر دودن کا وقت مانگا۔فیصل آباد ، لاہور اور دیگر شہروں میں الیکشن کمیشن کے عملے نے ووٹر لسٹوں کی سادہ کاپیوں کے عوض قومی و صوبائی اسمبلی کے امیدواروں کی جیبوں پر ہاتھ صاف کیے۔ قومی اسمبلی کے ایک امیدوار نے ووٹر لسٹوں کی سادہ کاپی پر 50 ہزار سے ایک لاکھ روپے تک خرچ کئے جب کہ صوبائی اسمبلی کے ہر امیدوار نے ووٹرلسٹوں کی سادہ کاپی کے عوض 25سے 50ہزار روپے خرچ کئے۔دوسری جانب الیکشن کمشنر پنجاب ظفر اقبال نے معاملے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ الیکشن کمیشن کے افسران ووٹرلسٹوں کی فوٹو کاپی کے عوض رشوت نہیں لیتے۔ ڈسٹرکٹ الیکشن کمشنر لاہور رحم زادہ نے ووٹر لسٹوں کی فوٹو کاپی کے عوض وصول کی جانے والی رشوت کے حوالے سے موقف دینے سے انکار کردیا۔

الیکشن کمیشن افسران

سانگھڑ، سیہون (این این آئی)سانگھڑ اور سیہون میں اسسٹنٹ ریٹرننگ آفیسرز (اے آر اوز) نے پوسٹل بیلٹ پیپرز کھولنے کی کوشش کی جس کے نتیجے میں 6 پولنگ افسران گرفتار کرلیے گئے تھے ۔سیکرٹری الیکشن کمیشن نے اے آر اوز کی پوسٹل پیپرز کھولنے کی کوشش کے واقعہ پر چیف سیکریٹری سندھ سے رابطہ کرلیا ۔نگران وزیر اعلیٰ سندھ نے سیہون کے حلقے پی ایس 80 پر پوسٹل بیلٹ پیپرز کھولنے کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی سی اور ایس ایس پی سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے فوری تحقیقات کا حکم جاری کردیا ہے۔ترجمان وزیر اعلیٰ ہاؤس کے مطابق نگران وزیر اعلیٰ کے نوٹس پر ایس ایس پی نے 6 پولنگ افسران کو گرفتار کرلیا جن میں اسسٹنٹ ریٹرننگ افسر قربان میمن، محمدصالح، عابدعلی، محمد اسلم، غلام مصطفی اور عبدالعزیز شامل ہیں۔سندھ یونائیٹڈ پارٹی (ایس یو پی) کے رہنما روشن برڑو نے بتایا کہ سیہون کے حلقے پی ایس 80 اسسٹنٹ ریٹرننگ افسر قربان میمن کے دفتر میں اچانک گئے تو وہاں قربان میمن کے ساتھ پرائمری ٹیچرز ایسوسی ایشن کے صدر عزیز راہپوٹو موجود تھے اور اے آر او کی میز پر پوسٹل بیلٹ کے لفافے موجود تھے۔ایس یو پی کے رہنما روشن برڑو نے الزام عائد کیا کہ اے آر او قربان میمن پوسٹل بیلٹ پر مرضی کے امیدوار کا نام لکھ رہے تھے تاہم ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے اے آر او قربان میمن کو شوکاز نوٹس جاری کردیا ہے۔نوٹس میں کہا گیا کہ پوسٹل بیلٹ پیپرز کے لفافے اے آر او قربان میمن کی ٹیبل پر پڑے ملے جس کے باعث پوسٹل بیلٹ پیپرز کا مرحلہ مشکوک ہوگیا ہے۔

پوسٹل بیلٹ پیپرز

مزید :

صفحہ اول -