جج ویڈیو سکینڈل، ملزم میاں طارق کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا 

  جج ویڈیو سکینڈل، ملزم میاں طارق کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا 

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کی مبینہ ویڈیو بنانے کے الزام میں گرفتار ملزم میاں طارق کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا۔ ویڈ یو سکینڈل میں گرفتار مرکزی ملزم میاں طارق کو عدالت میں پیش کیا گیا جہاں ایف آئی اے کی جا نب سے ملزم کے جوڈیشل ریمانڈ کی استدعا کی گئی۔ملزم میاں طارق کا اس موقع پر کہنا تھا مجھے برین ٹیومر ہے، جیل جا کر مر جاؤں گا جس پر عدالت نے میاں طارق کو جیل میں تمام میڈیکل سہولیات فراہم کرنے کا حکم دیا۔عدالت نے ایف آئی اے حکام سے استفسار کیا کیس کی تحقیقات میں اب تک کیا پیش رفت ہوئی ہے؟ایف آئی اے حکام کی جانب سے بتایا گیا میاں طارق کے دونوں گھروں کی تلاشی لی گئی، گھر وں میں تلاشی کے دوران گاڑی برآمد کی گئی، ڈیجیٹل کیمرے، ڈی وی آر کیمرے، یو ایس بی اور 2 موبائل فون بھی برآمد کیے گئے۔ میا ں طارق نے جج سے کہا میرے ساتھ جو مار پیٹ ہوئی تھی اس پر کیا کارروائی ہوئی؟ جس پر جج شائستہ کنڈی نے کہا میڈیکل رپورٹ میں ما ر پیٹ کا کوئی ذکر نہیں۔ملزم میاں طارق نے کہا میری جان کو بہت خطرہ ہے، مجھے جیل میں مار دیا جائے گا۔جج شائستہ کنڈی نے کہا جیل میں کسی کو نہیں مارتے، جیل سپرنٹنڈنٹ کو مکمل طبی سہولیات دینے کا لکھ رہی ہوں۔عدالت نے ملزم میاں طارق کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھجوانے کا حکم دیتے ہوئے انہیں 5 اگست کو دوبارہ عدالت پیش کرنے کی ہدایت کی۔

میاں طارق 

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)سپریم کورٹ آف پاکستان میں احتساب عدالت کے سابق جج ارشد ملک کی مبینہ ویڈیو کیس کی سماعت (آج) منگل 23جولائی کو ہوگی، چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ سماعت کریگا۔ سپریم کورٹ کی جانب سے جاری کر دہ کاز لسٹ کے مطابق مبینہ ویڈیو کیس کی سماعت چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ (آج) منگل 23 جولائی کو کریگا،جسٹس شیخ عظمت سعید اور جسٹس عمر عطاء بندیال بھی بینچ میں شامل ہیں۔ اٹارنی جنرل پاکستان انور منصور سمیت درخواست گزاروں کے وکلاء کو نوٹس جاری کر دیئے گئے،اٹارنی جنرل انور منصور تجاویز عدالت میں پیش کریں گے،گزشتہ سماعت پر تینوں درخواست گزاروں کے وکلاء نے دلائل دئیے تھے۔

 ویڈیو کیس

مزید : صفحہ اول