مقتول عمران فاروق کی بیوہ، بچے کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور

 مقتول عمران فاروق کی بیوہ، بچے کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ایم کیو ایم کے سابق رہنما عمران فاروق کی بیوہ اور بچے کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ایم کیو ایم کے سا بق مرکزی رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کی بیوہ شمائلہ فاروق اور ان کے 2 بیٹے عالی شان اور وجدان انتہائی کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں اور شمائلہ بے گھرہونے کے خطرے سے بھی دوچار ہیں کیونکہ ان کے فلیٹ کے مالک نے انہیں فلیٹ خالی کرنے کے نوٹس دے رکھے ہیں۔ شمائلہ فاروق نہ صرف شدید مالی مشکلات کا شکار ہیں بلکہ وہ کئی ماہ سے مکان تلاش کررہی ہیں اور کوئی انہیں مکان کرائے پر دینے کو تیار نہیں ہے۔شمائلہ فاروق نومبر 2016 میں جبڑا ٹوٹ جانے کے باعث ہسپتال میں داخل رہنے کے بعد بھی مکمل طور پر صحت یاب نہیں ہوسکی ہیں اور اب سہارے کے بغیر چل بھی نہیں سکتیں۔اسوقت وہ لندن کے پسماندہ علاقے میں ایک پیزا شاپ اور مکینک کی ورک شاپ کے اوپر ایک چھوٹے سے بوسیدہ فلیٹ میں مقیم ہیں جبکہ شمائلہ فاروق صحت کے مسائل کی وجہ سے تقریباً مفلوج ہوگئی ہیں۔50 سالہ ڈاکٹر عمران فا ر و ق کو 16 ستمبر 2010 کو لندن میں ان کی رہائشگاہ کے باہر قتل کیا گیا تھا اور ان کے قتل کا مقدمہ پاکستان میں بھی چل رہا ہے جبکہ لندن کی اسکاٹ لینڈ یارڈ اب تک ان کے قاتل پکڑنے میں ناکام ہے۔ایف آئی اے نے 2015 میں عمران فاروق کے قتل میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے شبہ میں بانی متحدہ اور ایم کیو ایم کے دیگر سینئر رہنماؤں کیخلاف مقدمہ درج کیا تھا،کیس میں محسن علی سید، معظم خان اور خا لد شمیم کو بھی قتل میں ملوث ہونے کے الزام میں گرفتار کیا گیا جبکہ میڈیا رپورٹ کے مطابق ایک اور ملزم کاشف خان کامران کی موت واقع ہو چکی ہے۔

بیوہ عمران فاروق

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...