مفتی عبدالقوی سے معافی نہیں مانگی ، اظہار افسوس کیا، جان سے مارنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں: قندیل بلوچ

مفتی عبدالقوی سے معافی نہیں مانگی ، اظہار افسوس کیا، جان سے مارنے کی دھمکیاں ...
مفتی عبدالقوی سے معافی نہیں مانگی ، اظہار افسوس کیا، جان سے مارنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں: قندیل بلوچ

  


لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) تنازعات میں خاص ملکہ رکھنے والی ماڈل گرل قندیل بلوچ نے مفتی عبدالقوی کی جانب سے معافی مانگے جانے کے بیان کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نے مفتی صاحب سے اس تناظر میں معافی نہیں مانگی بلکہ ان کے رویت ہلال کمیٹی سے نکالے جانے پر مجھے افسوس ہوا جس پر میں نے ان سے معافی مانگی۔قندیل بلوچ نے الزام بھی لگایا کہ اسے مفتی عبدالقوی کی جانب سے مختلف ذرائع سے جان سے مارنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔

نجی ٹی وی جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے قندیل بلوچ آبدیدہ ہوگئیں اور کہا کہ جب مفتی عبدالقوی کو رویت ہلال کمیٹی سے نکالا گیا تو مجھے اس بات کی خوشی ہوئی کہ میں نے اتنے مکروہ چہرے کو بے نقاب کیا لیکن مجھے اس بات کا بھی دکھ ہوامیں نے یہی سوچا کہ ان کا گزارہ سرکاری تنخواہ پر چلتا ہوگا اس لیے میں نے افسوس کا اظہار کیا۔ جس طرح مفتی صاحب کہہ رہے ہیں میں نے اس طریقے سے مفتی صاحب سے معافی مانگنے کی کوئی کوشش نہیں کی۔

 قندیل بلوچ نےمفتی عبدالقوی کو کیا پیغام بھیجا ؟ مفتی صاحب نے میڈیا کے نمائندوں کو دکھادیا، تفصیلات کیلئے یہاں کلک کریں

قندیل بلوچ کا کہنا تھا کہ بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب میں نے مفتی عبدالقوی کو فون کیا تو انہوں نے میرا فون نہیں اٹھایا جس پر میں نے انہیں پیغامات بھیجے ۔اگر انہیں لگتا ہے کہ انہیں بے نقاب کرکے میں نے غلط کیا ہے تو بدلے میں وہ جو کچھ کرنا چاہیں کرلیں۔

قندیل بلوچ نے روتے ہوئے کہا کہ گزشتہ کچھ دنوں سے مجھے دھمکیاں مل رہی ہیں اور مجھے انڈر گراو¿نڈ رہنے کیلئے کہا جارہا ہے میری حکومت سے گزارش ہے کہ مجھے سکیورٹی فراہم کی جائے۔ ایک سوال کے جواب میں قندیل بلوچ کا کہنا تھا کہ مجھے پرائیویٹ نمبر سے دھمکیاں مل رہی ہیں اور یہ مفتی صاحب مجھے مختلف ذرائع سے دھمکیاں دے رہے ہیں۔ میں بس یہی کہوں گی کہ مفتی صاحب کو جو کچھ کرنا ہے کرلیں میں ان کا ڈٹ کر مقابلہ کروں گی ۔

مزید : تفریح /اہم خبریں