کسانوں کا شوگرملز مالکان کیخلاف دوبارہ احتجاج شروع کرنے کا پروگرام ترتیب

کسانوں کا شوگرملز مالکان کیخلاف دوبارہ احتجاج شروع کرنے کا پروگرام ترتیب

چونیاں(نامہ نگار)کسانوں نے شوگرملز مالکان کے خلاف دوبارہ احتجاج شروع کرنے کا پروگرام ترتیب دے دیا ہے۔ کیونکہ عدالت عظمیٰ کے واضح احکامات کی شوگر ملز کے مالکان نے صریحاً خلاف ورزی کی ہے اور چیف جسٹس آف پاکستان کے احکامات کو ہوا میں اڑا دیا ہے۔ ضلع قصور کے کسانوں کے راہنما سرداراورنگزیب بیگوکا و دیگر نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ چونیاں شگرملز کے ذمہ چار سال سے مسلسل ایک ارب کے قریب زمینداروں کی گنے کی ادائیگیاں چلی آرہی ہیں۔ نوے کروڑ کے قریب چینی فروخت کرکے رقم ہائیکورٹ کے اکاؤنٹ میں جمع کروائی گئی تھی۔ لاہورہائیکورٹ کے واضح احکامات کے باوجود ضلعی انتظامیہ نے زمینداروں سے سی پی آرز اور شناختی کارڈز وصول کرنے کے باوجود دانستہ طور پر ادائیگیاں نہ کی ہیں۔ جبکہ چیف جسٹس آف پاکستان میں ثاقب نثار نے شوگرملزمالکان کو واضح طور پر حکم دیا تھا کہ کسانوں کو سات ہفتوں کے اندر اندر مکمل بقایا جات کی ادائیگی کر دی جائے۔ مگر ملزمالکان کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی ہے۔ شوگر ملوں کے ذمہ ایک ارب پچاس کروڑ کے واجبات ہیں۔ کسانوں پہلے ہی معاشی طور پر دیوالہ ہوچکا ہے۔ آئندہ فصلوں کے لئے ان کے پاس پیسے نہیں ہیں۔ ادائیگیوں کے سلسلہ میں ضلع بھر کے کسانوں کی مشاورت جاری ہے۔ بھرپور احتجاج کا پروگرام تشکیل دے دیا گیا ہے۔

مزید : علاقائی