لو میرج کرنیوالے لڑکے کی 6 سالہ بہن کا زبردستی نکاح: پنچائت نے فیصلہ دیدیا

لو میرج کرنیوالے لڑکے کی 6 سالہ بہن کا زبردستی نکاح: پنچائت نے فیصلہ دیدیا
لو میرج کرنیوالے لڑکے کی 6 سالہ بہن کا زبردستی نکاح: پنچائت نے فیصلہ دیدیا

  

پاکپتن (ویب ڈیسک) پنچایتی فیصلے نے ظلم اور بربریت کی دردناک مثال قائم کردی، پنچایت نے مرضی کی شادی کرنے پر لڑکے والوں کو چھ سالہ بچی لڑکی والوں کو نکاح میں دینے کا فیصلہ سنا کر چھ سالہ بچی کے والد کے اشٹام پیپر پر زبرستی انگوٹھے لگوا لئے، ظلم اور بربریت کا شکار بچی کا والد اپنی بیٹی سمیت گاﺅں سے فرار ہو گیا، پنچایت کا لڑکے والوں کے گھر دھاوا، توڑ پھوڑ اور قبضہ کی کوشش کی۔

بتایا گیا ہے کہ ضلع پاکپتن کے نواحی 12/kb کے رہائشی علی رضا ولد محمد شفیع نے آسیہ بی بی دختر جہانگیر سے لو میرج کی تھی جس کی پبچائت علاقے قطبیہ چوک یونین کونسل جیون شاہ میں ہوئی۔ پسند کی شادی کرنے والی لڑکی کے بااثر گھر والوں کے دباﺅ میں آ کر لڑکے کے گھر والوں کے خلاف پنچایتی فیصلے کے مطابق لڑکے والوں کو اپنی مرضی سے شادی کرنے والی لڑکی کے عوض اپنی چھ سالہ لڑکی سعدیہ کا نکاح لڑکی کے بھائی علی عمران کو دینا ہوگا جس کے لیے پنچا یت نے 20 جون کا دن مقرر کیا تھا۔

چھ سالہ لڑکی کا بے بس اور لاچار باپ پنچایت اور با اثر لڑکی والوں کے ظلم سے تنگ آکر اپنی بیٹی کو لے کر گاﺅں سے فرار ہوگیا ہے لیکن پنچایتیوں نے ان کے گھر اور جگہ پر قبضہ کرلیا اور اب بھی وہ اس جگہ پر قابض ہیں، لاچار باپ انصاف کا منتظر ہے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /پاکپتن