پاکستان میں جولائی اور اگست میں کورونا مریضوں کی تعداد 35لاکھ ہونے کا خدشہ 

پاکستان میں جولائی اور اگست میں کورونا مریضوں کی تعداد 35لاکھ ہونے کا خدشہ 

  

لاہور (آئی این پی) طبی ماہرین نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ پاکستان نے اگر کورونا کو روکنے کیلئے مؤثر حکمت عملی نہ اختیار کی تو جولائی اور اگست میں متاثرین کی تعداد 35 لاکھ تک پہنچ سکتی ہے۔ تفصیلات کے مطابق لاک ڈاؤن میں نرمی اور لوگوں کی جانب سے لاپرواہی کے باعث کورونا نے لاہور میں پنجے گاڑھ لیے جس سے شہر کے بیشتر علاقے،گلیاں،محلے وائرس کی لپیٹ میں ہیں۔ محکمہ صحت پنجاب کے مطابق صوبے میں 68 ہزار سے زائد افراد کورونا سے متاثر ہو چکے ہیں،جبکہ ایک ہزار 407 مریض زندگی کی بازی ہار گئے۔ صرف لاہور میں 33 ہزار 811 افراد کورونا وائرس میں مبتلا ہوئے جب کہ 545 مریض جاں بحق ہوئے۔ پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن لاہور کے صدر پروفیسر اشرف نظامی نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ کورونا کی صورتحال آئندہ مہینے مزید خطرناک ہو سکتی ہے۔ جب کہ وائس چانسلر یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز پروفیسرڈاکٹر جاوید اکرم کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کورونا سے متاثرہ ایک مریض 3 افراد میں وائرس منتقل کرنے کا باعث بن رہا ہے۔ علاوہ ازیں گرینڈ ہیلتھ الائنس کے چیئرمین ڈاکٹر سلمان حسیب نے دعویٰ کیا ہے کہ 50 فیصد ہیلتھ پروفیشنلز کورونا سے متاثر ہیں اورہسپتالوں میں جگہ کی کمی ہے جب کہ اموات 4 گنا تک بڑھ سکتی ہیں۔ محققین کا دعویٰ ہے کہ بہت بڑی تعداد ایسے لوگوں کی ہے جو کورونا سے متاثر ہیں لیکن ان کا کوئی ریکارڈ نہیں۔ 

ڈاکٹر جاوید اکرم

مزید :

صفحہ اول -