کامیابی حاصل کرنے کا کارگر کلیہ یہ ہے کہ دوسروں کو اپنے مسائل، گھرانوں اور مقاصد کے متعلق بات کرنے دیں، لیکن اپنے متعلق کوئی بات نہ کریں 

کامیابی حاصل کرنے کا کارگر کلیہ یہ ہے کہ دوسروں کو اپنے مسائل، گھرانوں اور ...
کامیابی حاصل کرنے کا کارگر کلیہ یہ ہے کہ دوسروں کو اپنے مسائل، گھرانوں اور مقاصد کے متعلق بات کرنے دیں، لیکن اپنے متعلق کوئی بات نہ کریں 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

مصنف:ڈاکٹر ڈیوڈ جوزف شیوارڈز
ترجمہ:ریاض محمود انجم
 قسط:128
لوگوں کی باتوں کو دلچسپی اور غور سے سننے کے عمل سے تھامس بی نے زبردست خوشحالی حاصل کر لی:
تھامس بی (Thomas B)، اساتذہ اور دیگر تعلیمی پیشہ وارانہ افراد کو ”ٹیکس کے بغیر پنشن پلان (Tax Deferred Pension Plan)“فروخت کرنے کے ضمن میں خاص مہارت رکھتا ہے اور وہ اپنے پیشے میں بہت کامیاب ہے۔ میں تقریباً گذشتہ5سال سے تھامس کو جانتا ہوں۔
ایک دن میں نے اس سے پوچھا ”تمہارے مقابلے میں کم از کم 5 ادارے موجود ہیں جو اس قسم کی خدمات مہیا کر رہے ہیں لیکن کیا وجہ ہے کہ تم ان سے زیادہ کامیاب ہو اور تمہاری آمدنی ان سب سے زیادہ ہے۔“
اس کا جواب نہایت سادہ تھا:”پہلے میں سنتا ہوں، پھر کوئی قدم اٹھاتا ہوں۔“ اس نے اپنے طریقے کی وضاحت کرتے ہوئے کہا ”دراصل میرا کاروبار یہ ہے کہ آپ اپنی آمدنی کا کچھ حصہ سرمایہ کاری کے لیے مختص کردیتے ہیں، او راس طرح سرمایہ کاری کرتے ہیں تاکہ آپ کو ٹیکس کی ادائیگی نہ کرنا پڑے اور آپ اپنی ریٹائرمنٹ تک آمدنی حاصل کرتے رہتے ہیں۔ ہر شخص کے حالات مختلف ہوتے ہیں، ان معاملات میں بیوی، بچے، انشورنش، بیرونی آمدن اور بہت سے خفیہ امور اور پھر آپ کی صحت شامل ہے۔ بعض اوقات حکومتی قوانین آڑے آجاتے ہیں، ٹیکس کے متعلق نئے قوانین نافذ ہو جاتے ہیں، اور ایسے بے شمار امور کا ہمیں سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اس ضمن میں پہلے میں اپنے گاہکوں کی تجاویز اور آراء کے علاوہ ان کی خواہشات و ضروریات سے بھی آگاہ ہوتا ہوں، اور پھر میں لائحہ عمل ان کے سامنے پیش کرتا ہوں۔ میں اس میدان میں موجود دیگر 5اداروں کی مجموعی آمد ن سے بھی زیادہ آمدن حاصل کر رہا ہوں۔“
میں نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا ”لیکن میرا اندازہ ہے کہ تمہاری اس تجزیاتی ترکیب کے علاوہ بھی موثر اور مفید طرائق تمہارے پاس موجود ہیں؟“
تھامس نے میری بات تسلیم کر لی اور کہا ”بالکل ایک دو طرائق مزید میرے ہاتھ میں ہیں۔ اپنے گاہک کے ذاتی یا پیشہ وارانہ مسائل کے متعلق جو بھی معاملہ مجھے معلوم ہوتا ہے، میں اسے مکمل طور پر خفیہ رکھتا ہوں۔“ پھر اس نے مجھے دیکھا اور کہا: تمہیں معلوم ہے کہ میرے پاس ہر وقت اور ہمیشہ کم از کم 15 یا 20 گاہک موجود رہتے ہیں، میں نے کبھی تم کو ان کے ذاتی معاملات، آمدنی، طلاق، قرضوں، اور اسی طرح کے دیگر امور کے متعلق کبھی کچھ بتایا ہے؟“
میں نے جواب دیا:”نہیں کبھی نہیں، میں نے کبھی اس کے متعلق سوچا تک نہیں اور تم نے کبھی گپ شپ کے انداز میں بھی دوسرے لوگوں کے متعلق ایسی بات نہیں کی۔“
تھامس نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا:”اور یہی وہ بات ہے، میں اپنے ذاتی مسائل، اپنے ذاتی لباس، نظرئیے یا مذہب کے متعلق کبھی کسی سے بات نہیں کرتا۔“
پھر تھامس نے مجھ سے پوچھا ”کیا تمہیں معلوم ہے کہ گذشتہ انتخابات میں، میں نے کسے ووٹ دیا تھا؟“
میں نے کہا ”نہیں“۔
اس کے پھر پوچھا: ”کیا تمہیں معلوم ہے کہ میرے بچے کتنے ہیں، ان کی عمریں کتنی ہیں، اور وہ کیا کر رہے ہیں؟۔“
دوبارہ مجھے اعتراف کرنا پڑا کہ میں کچھ نہیں جانتا۔
تھامس نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا ”کامیابی حاصل کرنے کے ضمن میں ایک کارگر کلیہ یہ ہے کہ دوسرے لوگوں کو اپنے مسائل، اپنے گھرانوں، اپنے مقاصد کے متعلق بات کرنے دیں، لیکن اپنے متعلق قطعی طور پر کوئی بات نہ کریں۔
اس ضمن میں تھامس نے تین سنہری اصول وضع کیے: 
1:آپ لوگوں کو اپنے (ان کے) متعلق بولنے کا موقع فراہم کریں۔
2: دوسرے لوگوں کے متعلق حساس معلومات خفیہ رکھیں۔
3:اپنے متعلق ہر ممکن کم بولیں او رباتیں بتائیں۔(جاری ہے)
نوٹ: یہ کتاب ”بُک ہوم“ نے شائع کی ہے (جملہ حقوق محفوط ہیں)ادارے کا مصنف کی آراء سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزید :

ادب وثقافت -