کرونا کیخلاف حکومتی اقدامات ناکافی،فوری 3ہفتوں کیلئے کرفیو نافذ کیا جائے:ڈاکٹر

  کرونا کیخلاف حکومتی اقدامات ناکافی،فوری 3ہفتوں کیلئے کرفیو نافذ کیا ...

  



لاہور(رپورٹ جاوید اقبال،تصاویر ذیشان منیر)ملک میں سپیشلسٹ ڈاکٹروں کی معروف تنظیم ینگ کنسلٹنٹس ایسوسی ایشن پاکستان (وائے سی اے)نے کرونا وائرس سے بچاؤ کیلئے فوری طور پرملک میں 3ہفتوں کیلئے کرفیو نافذ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر ایسا نہ ہوا تو حالات قابو سے باہر ہو سکتے ہیں۔گزشتہ روز پاکستان فورم میں گفتگو کرتے ہوئے ینگ کنسلٹنٹ ایسوسی ایشن پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر اسفند یار خان،وائے سی اے کے صدر ڈاکٹر حامد مختار بٹ،سینئر نائب صدر ڈاکٹر عثمان ایوب،نائب صدرڈاکٹر عدنان ارشد،ترجمان ڈاکٹر عدیل مسعود،صدر چلڈرن ہسپتال لاہور ڈاکٹر محمد سعود،صدر ننکانہ ڈاکٹر مزمل اقبال وڑائچ،جنرل سیکرٹری ننکانہ ڈاکٹر عاصمہ کنول،صدر شیخ زیدہسپتال لاہور ڈاکٹر نور النساء، انفرمیشن سیکرٹری ڈاکٹر ہماء اسلم،جنرل سیکرٹری میو ہسپتال لاہورڈاکٹر فرقان یقوب نے کہا کہ ہم شروع دن سے کہہ رہے ہیں کہ حکومت جاگے اس سے پہلے کہ حلات قابو سے باہر ہو جائیں۔جب جاگنے کا وقت تھا تب حکومت سوئی رہی جب کرونا وائرس سے بچاؤ کے لئے آگاہی نہ پھلائی گئی۔ہسپتالوں میں کام کرنے والے ڈاکٹرز کو حفاظتی سازو سامان نہ دیا گیا۔ زائرین کو بارڈر پر نہ روکا گیا۔ اللہ نہ کرے حکومت کی نا اہلی کا خمیازہ عوام کو بھگتاپڑے اب بھی وقت ہے حکومت قوم کو اس وائرس سے بچانے کے لئے سخت انتظامات کرے۔ ڈاکٹر حامد مختار بٹ نے کہا کہ جتنی جلدی کرفیو نافذ کیا جائے گا یہ پاکستان کے لئے اتنا ہی مفیدہو گا۔حکومت غریب شہریوں کو انکے گھروں میں راشن پہنچانے کا فوری بندوبست کرے تاکہ وہ ضرورت کے بغیر گھر سے نا نکلیں۔ غریب شہریوں کے بجلی اور گیس کے بل وقتی طور پر معاف کئے جائیں۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی ہدایات پر حکومت پنجاب اورمحکمہ صحت نا تو خود عمل کر رہے ہیں نا ہی کروا رہے ہیں اسی وجہ سے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے میں حکومت پنجاب مکمل طور پر ناکام ہے۔ڈاکٹر عثمان ایوب نے کہا کہ پاکستانی شہریوں سے اپیل ہے کہ وہ بغیر کسی ایمرجنسی کے گھر سے باہر مت نکلیں۔ ڈاکٹر معظم اقبال وڑائچ اور ڈاکٹر عاصمہ کنول نے کہا کہ افسوس کا مقام ہے کہ محکمہ صحت پنجاب ابھی تک کسی ایک ہسپتال میں کرونا وائرس کی سکریننگ کی سہولت میسر نہیں کر سکا اور نہ ہی کام کرنے والے ڈاکٹروں نرسوں اور پیرامیڈیکل سٹاف کو وائرس سے بچاؤ کیلئے سازوسامان مہیا کیا گیا ہے۔خدا نہ خوستہ کسی ہیلتھ پروفیشنل کو وائرس ہو گیا تو وہ وائرس کو آگے منتقل کرنے کا بڑا زریہ بنے گا۔

ڈاکٹرز

مزید : علاقائی