کورونا وائرس کا شکار ہونے والے مریضوں کی طبیعت بہتر ہوتی ہے اور پھر اچانک بگڑ جاتی ہے، علاج کرنے والے ڈاکٹروں نے انتہائی اہم تفصیلات بتادیں

کورونا وائرس کا شکار ہونے والے مریضوں کی طبیعت بہتر ہوتی ہے اور پھر اچانک بگڑ ...
کورونا وائرس کا شکار ہونے والے مریضوں کی طبیعت بہتر ہوتی ہے اور پھر اچانک بگڑ جاتی ہے، علاج کرنے والے ڈاکٹروں نے انتہائی اہم تفصیلات بتادیں

  



نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کے متعلق نت نئی معلومات اور انکشافات سامنے آ رہے ہیں۔ اب امریکی ڈاکٹروں نے بتایا ہے کہ کورونا وائرس کے مریض وباءمیں مبتلا ہونے کے چند دن بعد ایسا لگتا ہے کہ روبہ صحت ہیں، وہ بہت بہتر محسوس کر رہے ہوتے ہیں لیکن پھر اچانک ڈرامائی انداز میں ان کی طبیعت بگڑ جاتی ہے اور انہیں قرنطینہ سنٹر سے ہسپتال منتقل کرنا پڑجاتا ہے۔میل آن لائن کے مطابق امریکی شہر نیو اورلینز میں کورونا وائرس کے 20سے زائد مریضوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹر جوشوا ڈینسن نے بتایا ہے کہ ”کورونا وائرس میں مبتلا ہونے کے بعد پہلے مرحلے میں مریض کو دھیمی سی جلن محسوس ہوتی ہے۔ کئی مریضوں میں دیگر علامات ظاہر ہونے کے چند دن بعد ان کی حالت بہتر ہونے لگتی ہے اور پھر اچانک ان کی طبیعت بگڑ جاتی ہے۔

ڈاکٹر جوشوا کا کہنا تھا کہ ”کورونا وائرس کے مریض علامات ظاہر ہونے کے ایک ہفتے بعد یا تو صحت مند ہونا شروع ہو جاتے ہیں یا پھر ان کی حالت تشویشناک ہو جاتی ہے اور ہسپتال پہنچ جاتے ہیں۔ ہسپتال پہنچنے والے مریضوں میں سے اکثریت پہلے صحت بہتر ہونے کا بتاتی ہے، وہ کہتے ہیں کہ اب وہ بہت بہتر محسوس کر رہے ہیں لیکن پھر ان کی حالت اچانک تشویشناک ہو جاتی ہے۔ ان کا پورا بدن تکلیف کرنے لگتا ہے، سانس میں شدید دشواری ہونے لگتی ہے اور سینے میں ٹیسیں اٹھنے لگتی ہیں۔“

مزید : بین الاقوامی