محکمہ خوراک کے چھاپے، گندم کی 90ہزار سے زائد بوریاں برآمد

    محکمہ خوراک کے چھاپے، گندم کی 90ہزار سے زائد بوریاں برآمد

  

لاہور(لیڈی رپورٹر)پنجاب کے 10اضلاع میں گندم کی ذخیرہ اندوزی کے خلاف بڑی کاروائیاں کرتے ہوئے محکمہ خوراک نے 90ہزار سے زائد گندم کی بوریاں برآمد کر کے قبضے میں لے لی ہیں۔762مقامات پر چھاپے مارے گئے اور 267گاڑیاں قبضے میں لے کر ذخیرہ اندوزوں کے خلاف 213ایف آئی آربھی درج کر لی گئیں۔ سینئر وزیر پنجاب عبدالعلیم خان کی ہدایات پر تعطیلات کے دوران بھی یہ ایکشن جاری رہے گا۔اس سلسلے میں گفتگو کرتے ہوئے عبدالعلیم خان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان اور وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کے احکامات پر ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن جاری ہے۔ گوجرانوالہ،لیہ، خانیوال، منڈی بہاؤ الدین اور چکوال میں چھاپے مار کر گند م کے بھاری ذخائر قبضے میں لیے گئے ہیں۔اُن کا کہنا تھا کہ ذخیرہ اندوزی کی یہ منفی سرگرمیاں مارکیٹ میں منافع خوری اور قیمتو ں میں اضافے کا باعث بنتی ہیں، ذخیرہ اندوزی معاشرتی ناسور بن چکا ہے جس سے ہر حال میں چھٹکارا پانا ہوگا۔عبدالعلیم خان نے بتایا کہ بہاولنگر،ڈیرہ غازی خان، وہاڑی، میلسی اور کوٹ ادو سے بھی گندم کی بڑی کھیپ پکڑی گئی ہے اور محکمہ خوراک نے بھرپور ایکشن کرتے ہوئے یہ سٹاک قبضے میں لے لیا ہے۔ عبدالعلیم خان نے کہا کہ پنجاب میں گندم خریداری مہم اپنے آخری مرحلے میں داخل ہو چکی ہے اور ذخیرہ اندوزی کے ذریعے اس مہم پر اثر انداز ہونے کی اجازت نہیں دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان سے حالیہ ملاقات میں پنجاب میں خورا ک کے شعبے سے متعلق تفصیلی بات چیت ہوئی ہے اور انشاء اللہ مستقبل میں نئی پالیسیوں کے تحت گندم کی خریداری عمل میں لائیں گے جس سے کاشتکاروں کو فائدہ حاصل ہوگا۔ سینئر وزیر پنجاب عبدالعلیم خان نے کہا کہ حکومت کا کردار سہولت کار ی اور ریگولیٹری ہونا چاہیے جبکہ بزنس اورکاروباری سرگرمیاں پرائیویٹ اداروں کو کرنی چاہئیں۔انہوں نے توقع ظاہر کی کہ انشاء اللہ پنجاب میں آٹے سمیت خوراک کا کوئی بحران نہیں آئے گا اور صورتحال تسلی بخش رہے گی۔

گندم برآمد

مزید :

صفحہ آخر -