پولیس نے نوجوان کو مار مار کر چوری منوالی باقاعدہ چور ڈکلئر کر دیا والدین کی فریاد

پولیس نے نوجوان کو مار مار کر چوری منوالی باقاعدہ چور ڈکلئر کر دیا والدین کی ...
پولیس نے نوجوان کو مار مار کر چوری منوالی باقاعدہ چور ڈکلئر کر دیا والدین کی فریاد

  

لاہور( کرائم سیل )تھانہ نشترکالونی کی پولیس نے مبینہ طور پر ایک معصوم نوجوان کو مارمارکر اد ھ موا کردیا اور اس کے کھاتے میں چوری کی متعددوارداتیں ڈال کر اسے باقاعدہ چور ڈکلیئر کردیا ، ناجائزاسلحے اور پیشہ ور مجرموں کے ساتھ فوٹو سیشن تیار کرکے اسے گینگسٹر بنانے کا منصوبہ بھی تشکیل دے دیا ہے ،نوجوان کے اہل خانہ ہاتھ جوڑ کرصرف فریادیں ہی کرتے رہ گئے ۔ تفصیلات کے مطابق تھانہ نشتر کالونی کی حدود میں ایک نامعلوم نوجوان موٹر سائیکل سے پٹرول چوری کررہا تھا کہ اہل محلہ نے ون فائیو پر کال کردی ۔ جب پولیس موقع پر پہنچی تو اس دوران پٹرول چوری کرنے والا نوجوان فرار ہوچکا تھا اور پولیس نے ایک سترہ سالہ نوجوان سجاول کو گرفتار کرلیا ۔ تھانے لے جاکر سجاول پر دباؤ ڈالا گیا کہ چوری کی واردات تسلیم کرلے ،انکار پر اسے نجی ٹارچر سیل میں منتقل کردیا اور تین دن اتنا تشدد کیا کہ وہ بلند آواز میں پکارنے لگا ’’ہاں میں ہی چور ہوں ‘‘ ۔ جس پرپولیس نے اس کے کھاتے میں چوری کی مزید وارداتیں ڈال دیں ۔ ایس ایچ او نشتر کالونی رانا اکمل کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ سجاول نامی نوجوان موٹرسائیکل چوری کی دو وارداتیں تسلیم کرچکا ہے اور اس کے خلاف چوری اور ناجائز اسلحہ رکھنے سمیت چار مقدمات درج ہیں جبکہ والدین کا کہنا ہے کہ ہمارا بیٹا معصوم ہے جو ایک فیکٹری میں محنت مزدوری کرتا ہے ۔ پولیس نے تشدد کے ذریعے اسے مجبور کیا ہے اور اس دوران ہمیں بیٹے کے ساتھ ملنے بھی نہیں دیا گیا۔ والدین کا یہ بھی کہنا ہے کہ سجاول کی اسلحے اور دیگر ملزمان کے ساتھ ایسی تصاویر بنائی گئی ہیں جو میڈیا کے سامنے اس لئے پیش کی جائیں گی کہ نشتر کالونی کی پولیس یہ ثابت کرسکے کہ وہ پورا گینگ چلاتا ہے اور چوری کی وارداتیں کرتے ہیں ۔ سجاول کے والد لیاقت نے اعلیٰ حکام سے انصاف کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ان کے بیٹے کے خلاف کوئی کریمنل ریکارڈ نہیں ہے ،جتنے بھی پرچے ہیں وہ تھانہ نشتر کالونی کی پولیس نے غلط طریقے سے درج کئے ہیں ۔

مزید :

علاقائی -