اعتبار ساجد کے شعری مجموعے جانم کی تقریب پذیرائی،ادبی شخصیات کی بھرپور شرکت

اعتبار ساجد کے شعری مجموعے جانم کی تقریب پذیرائی،ادبی شخصیات کی بھرپور شرکت

  

لاہور (پ ر) پاکستان ادبی فورم کے زیر اہتمام معروف شاعر اعتبار ساجد کے شعری مجموعے ’جانم‘‘ کی تقریب پذیرائی کا انعقاد ہوا۔ تقریب میں مرکزی چیئرمین ذبیح اللہ بلگن، اعتبار ساجد، مدثراقبال بٹ، اسلم کمال، شاہد، علی خان، ابصار عبدالعلی، کرن وقار، ممتاز راشد لاہوری، آپانسیم،مسعود اختر، بابا نجمی، واصف اعوان، مشتاق احمد شاکر، پروین سجل، انیلا منیر، فرحت منظور، عالیہ بخاری، محمد کامران ساقی، گلشن عزیز، عمران ناصر، سید باقر اور دیگر نے شرکت کی۔ پاکستان ادبی فورم کے مرکزی چیئرمین ذبیح اللہ بلگن نے کہا کہ پاکستان ادبی فورم شہر لاہور کی ادبی محافل آباد کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ وطن عزیز سے شدت پسندی کے خاتمے کے لئے ادب کو بروئے کار لانا ہوگا۔ مرکزی چیئرمین کا کہنا تھا کہ اعتبار ساجد عصر حاضر کے ممتاز شاعر و ادیب ہیں، ہمیں فخر ہے کہ ہم اعتبار ساجد کے دور میں زندہ ہیں۔ معروف شاعر اعتبار ساجد نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج کے دور میں ادب مفقود ہوتا جارہا ہے تاہم آج بھی ادبی ذوق رکھنے والوں کی کمی نہیں ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ادبی فورم جیسے ادارے ہی نوجوان نسل کو ادب سے روشناس کروا کر ہی معاشرے میں امن قائم کرسکتے ہیں۔ ابصار عبدالعلی کا کہنا تھا کہ ادب محض شاعری کا نام نہیں ادب میں نثر اور افسانہ بھی شامل ہے اعتبار ساجد اس اعتبار لائق تحسین ہیں کہ وہ ادب کی تمام اصناف کو اظہار کے لئے بروئے کار لائے ہیں۔ شاہد علی خان نے کہا کہ جس قدر ادب کو آج احیاء کی ضرورت ہے اس سے پہلے کبھی نہ تھی۔ بظاہر آج سوشل میڈیا نے تمام طبقات کو اپنے زیر اثر کر رکھا ہے تاہم ادب کے احیاء کے لئے سوشل میڈیا کو بروئے کار لانا چاہئے ۔ محترمہ کرن وقار کا کہنا تھا کہ ادب بے ادب ہوتاجارہا ہے وجہ یہ ہے کہ آج کا ادیب اپنے اصل مقصد سے بے اعتنائی برت رہا ہے۔ محترمہ انیلا منیر نے کہا ہمارا وعدہ ہے کہ انشاء اللہ ہم لاہور کی ادبی محافل کو زندہ کریں گے اور ادیبوں و شاعروں کی فلاح بہبود میں کوئی کسر باقی نہ چھوڑیں گے۔

اعتبار ساجد

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -