معاشی سرگرمیوں کے فروغ میں ٹریڈ وکامرس افسران کا کلیدی کردار

معاشی سرگرمیوں کے فروغ میں ٹریڈ وکامرس افسران کا کلیدی کردار

فیصل آباد (بیورورپورٹ) پاکستان کی خوشحالی براہ راست معاشی ترقی سے وابستہ ہے اور اس سلسلہ میں انسٹیٹیوٹ آف ٹریڈاینڈ کامرس اسلام آبادکے زیر تربیت ٹریڈ اینڈ کامرس افسریقینااپناکلیدی کردار ادا کریں گے۔ یہ بات انسٹیٹیوٹ کی ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن محترمہ عائشہ مخدوم نے فیصل آباد چیمبر کے دورے کے دوران خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے زیر تربیت افسران کا تعارف کرایا اور بتایا کہ پاکستانی معیشت کو سنگین چیلنج درپیش ہیں جن سے نبرد آزما ہونے کیلئے زیر تربیت افسران کو کتابی علم کے ساتھ ساتھ عملی تربیت دینے کا بھی اہتمام کیا گیا ہے اور اس سلسلہ میں وہ مختلف چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے علاوہ تجارتی اور کاروباری ایسوسی ایشنوں کے مطالعاتی دورے کر رہے ہیں تا کہ انہیں صنعتکاروں اور تاجروں کے حقیقی مسائل کو ان کے اصل پس منظر میں دیکھنے اور سمجھنے کا موقع مل سکے۔ محترمہ عائشہ مخدوم نے کہا کہ بیرون ملک تعینات ہونے والے کمرشل قونصلروں کو ملکی برآمدات بڑھانے کیلئے سنجیدہ کوششیں کرنا ہونگی۔ تاہم انہوں نے کہا کہ آج انفارمیشن ٹیکنالوجی کا دور ہے اس لئے پاکستانی برآمدکنندگان کو بھی بیرونی منڈیوں میں جانے سے قبل متعلقہ خریداروں سے رابطے اور ضروری معلومات حاصل کرکے جاناچاہیئے تا کہ ان کے دوروں کو با مقصد بنایا جا سکے ۔ انہوں نے فیصل آباد چیمبر کے صدر شبیر حسین چاولہ کا خصوصی طور پر شکریہ ادا کیا جنہوں نے زیر تربیت افسران کے سوالوں کے انتہائی تسلی بخش جوابات دیئے۔

اس سے قبل شبیر حسین چاولہ نے فیصل آباد اور فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کا تعارف کرایا اور بتایا کہ پالیسی سازی میں متعلقہ سٹیک ہولڈرز کی شرکت ضروری ہے۔انہوں نے کہا کہ بعض اوقات حکومت ایسی پالیسیاں تشکیل دیتی ہے جن کا زمینی حقائق سے سرے سے تعلق ہی نہیں ہوتا اور ان کی وجہ سے معیشت کو فائدے کی بجائے نقصان اٹھانا پڑتا ہے ۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ فیصل آباد کی اصل معاشی قوت اس کا ایس ایم ای سیکٹر ہے جبکہ یہاں دو طرح کی صنعتیں ہیں ایک صرف برآمدات کیلئے مصنوعات تیار کرتی ہیں جبکہ دوسری مقامی ضروریات کو پورا کرتی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ بات غلط ہے کہ مقامی ضروریات کو پورا کرنے کے بعد جو مال بچ جاتا ہے اسے برآمد کیا جاتا ہے۔

مزید : کامرس