منشیات کی روک تھام کیلئے”زندگی“ایپ متعارف کرائیں گے،شہریار آفریدی

  منشیات کی روک تھام کیلئے”زندگی“ایپ متعارف کرائیں گے،شہریار آفریدی

  



لاہور (سٹی رپورٹر)وفاقی وزیر نارکورٹکس و سیفران شہریار آفریدی نے منہاج یونیورسٹی لاہور میں ”ڈرگ فری سوسائٹی“کے عنوان سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جس نے جرم کیا ہے اسے اس کے کیے کی سزا مل کر رہے گی، قانون سے کوئی بالاتر نہیں۔منشیات کی خرید و فروخت میں ملوث کسی بھی شخص کو سزا وزیراعظم،وزیرنارکوٹکس یا نارکوٹکس حکام نے نہیں عدالتوں نے دینی ہے، منشیات نوجوان نسل کو تباہ کررہی ہے، وزارت نارکوٹکس بہت جلد ”زندگی“کے نام سے ایک ایپ جاری کررہی ہے جس میں منشیات سے بچاؤ،منشیات کی روک تھام اور اس غلیظ کاروبار میں ملوث مجرموں کی کڑی گرفت کیلئے رہنمائی میسر ہو گی،نوجوان ملک و قوم کا مستقبل ہیں،ان کی صحت، اخلاق اور کردار کی حفاظت ریاست،والدین،اساتذہ،دوست احباب کی مشترکہ ذمہ داری ہے، یونیورسٹی آمد پر منہاج یونیورسٹی لاہور کے بورڈ آف گورنرز کے ڈپٹی چیئرمین ڈاکٹر حسین محی الدین،ڈاکٹر محمد اسلم غوری، خرم شہزاد نے خوش آمدید کہا، ڈاکٹر حسین محی الدین قادری نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بلاشبہ نوجوان نسل کو منشیات کے استعمال کا بڑا چیلنج لاحق ہے اس کے لیے تمام ریاستی اداروں کو ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو کر اپنا کردار ادا کرنا ہو گا

 یمرا اور سنسر بورڈ والے فلموں، ڈراموں میں منشیات کے استعمال کے سین حذف کروائیں۔ تمام اداروں کو ایک پیج پر آنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ منہاج یونیورسٹی امن، رواداری،بین المذاہب ہم آہنگی کے فروغ کے لیے کام کررہی ہے، انہوں نے وفاقی وزیر اور اینٹی نارکوٹکس حکام کو منشیات کے خاتمے کی جدوجہد میں اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا، وفاقی وزیر نے کہا کہ مجرموں کے خلاف سوسائٹی میں موجود ہمدردانہ رویوں کو ختم کرنے کے لیے بھی بیداری شعور مہم چلانے کی ضرورت ہے

مزید : میٹروپولیٹن 1