کرغزستان یورپ کو سی پیک کیساتھ منسلک کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے:اسد قیصر

کرغزستان یورپ کو سی پیک کیساتھ منسلک کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے:اسد ...

  



اسلام آباد (این این آئی) سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے کہا ہے کہ کرغزستان یوروشین اقتصادی زون اور یورپ کو سی پیک سے منسلک کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک پاکستان کے معاشی مستقبل کی کلید ہے۔ ان خیالات کا اظہار اسپیکر قومی اسمبلی نے جمہوریہ کرغزستان کے سفیر سے گزشتہ روز ملاقا ت کے دوران کیا۔ سپیکر اسد قیصر نے کہا کہ پاکستان کرغزستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو بے حد اہمیت دیتا ہے جو مذہب، تاریخ اور ثقافت کے لازوال رشتوں میں بندھے ہیں۔ اسپیکر نے کرغز سرمایہ کاروں کو پاکستان آنے اور یہاں موجود بے پناہ اقتصادی مواقعوں سے فائدہ اٹھانے کی دعوت دی۔ اسپیکر نے کہا کہ قومی اسمبلی کے تحت دسمبر 2019 میں سی پیک پر سیمینار کا اہتمام کیا جائے گا تاکہ سی پیک کے تحت پیدا ہونے والی بڑے معاشی مواقعوں کو خطے کے دوسرے ممالک کے سامنے پیش کیا جاسکے۔انہوں نے کہا کہ سی پیک کی آمد کے بعد پاکستان میں بے پناہ معاشی مواقعے پیدا ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ روڈ انفراسٹرکچر اور توانائی کے منصوبے تقریبا ًمکمل ہوچکے ہیں جو کسی بھی معاشی سرگرمی میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں۔ انہوں نے کرغز سفارت خانے کے تحت پاکستان میں سرمایہ کاری بورڈ اور وزارت تجارت کے عہدیداروں کے ساتھ کرغز کاروباری برادری کے مابین روابط پر زور دیا۔ انہوں نے پاکستان اور کرغزستان کے مابین تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کے لئے عوامی رابطوں کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔  اسپیکر نے علاقائی اور بین الاقوامی فورمز پر مسئلہ کشمیر کے اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل اور دیگر مسائل پر کرغزستان کے تعاون کو سراہا۔ اسپیکر نے کہا کہ قومی اسمبلی میں پاکستان کرغزستان پارلیمانی دوستی گروپ قائم کردیا گیا ہے جس میں دونوں ممالک کے درمیان تعاون کو بڑھانے کے لیے تبادلہ خیال کا جائے گا۔ کرغزستان کے سفیر Erik Beishembiev نے کہا کہ ان کا ملک پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو بھی بہت زیادہ اہمیت دیتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ان پاکستان کے ساتھ تعلق ابدی ہے اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس کو تقویت مل رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کا ملک علاقائی اور بین الاقوامی فورموں پر تمام امور پر ہمیشہ پاکستان کے شانہ بشانہ کھڑا رہے گا۔ 

اسد قیصر

مزید : صفحہ آخر