سی پیک سے پاکستانی معیشت کو بڑا نقصان پہنچے گا:ایلس ویلز،امریکہ الزامات میں احتیاط برتے:یاؤ جنگ

سی پیک سے پاکستانی معیشت کو بڑا نقصان پہنچے گا:ایلس ویلز،امریکہ الزامات میں ...

  



واشنگٹن(آن لائن)امریکہ نے گزشتہ روز پاکستان کو خبردار کیا ہے کہ اگر چین نے انفراسٹرکچر کا اپنا بڑا منصوبہ جاری رکھا تو اسے طویل المیعاد اقتصادی نقصان ہوگا جس میں فائدہ بہت کم ملے گا۔جنوبی ایشیاء کے لئے اعلیٰ امریکی سفارت کار نے کہا ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری جسے ایشیاء کے دونوں ممالک گیم چینجر منصوبہ قرار دیتے ہیں، صرف بیجنگ کو فائدہ دے گا، انہوں نے کہا ہے کہ امریکہ نے ایک بہتر ماڈل کی پیشکش کی ہے۔ساؤتھ ایشیاء کیلئے قائم مقام اسسٹنٹ سیکرٹری خارجہ ایلس ویلز نے کہا ہے کہ یہ واضح ہے یا اسے واضح کرنے کی ضرورت ہے کہ سی پیک کا مطلب امداد نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اربوں ڈالرز کے منصوبے میں غیر روایتی قرضے دیئے جارہے ہیں جس میں چینی کمپنیاں اپنے ہی مزدور اور سامان بھیج رہی ہیں۔ویلز نے ووڈرو ویلسن انٹرنیشنل سنٹر فار سکالرز میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سی پیک ابتدائی طور پر چینی مزدوروں اور سپلائیز پر انحصار کرتی ہے باوجود اس کے کہ پاکستان میں بیروز گاری بڑھ رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ راہداری پاکستانی معیشت کو بہت بڑا  نقصان پہنچانے والی ہے بالخصوص ایک ایسے وقت میں جب بہت زیادہ ادائیگیاں اگلے چار تا چھ برسوں میں شروع ہو جائینگی۔دوسری طرف افغان امور کی انچارج امریکی محکمہ خارجہ کی خاتون اہلکار نینسی ایزوجیکسن نے کہا ہے کہ وہ افغانستان میں بھارت کی موجودگی کی حمایت کرتا ہے اگرچہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنی فوج کے انخلاء کیلئے کوشاں ہے۔بھارت کا شمار افغانستان کی حکومت کے انتہائی حامیوں میں کیا جاتا ہے جس نے 2001ء میں امریکہ کی سربراہی میں ہونیوالے حملے میں بھارت مخالف عسکریت پسندوں کی شدت سے حمایت کرنے والے طالبان کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے تین بلین ڈالر سے زائد رقم دی ہے۔نینسی ایزوجیکسن نے کہا ہے کہ امریکہ افغانستان میں بھارت کی اہم موجودگی اور افغانستان کی امداد کو سراہتا ہے۔انہوں نے ہڈسن انسٹیٹیوٹ میں افغانستان میں بھارت کے کردار پر ہونیوالی کانفرنس میں کہا کہ ”اور ہم افغانستان میں ایک قابل احترام پائیدار نتیجہ حاصل کرنے کی کوششوں کی حمایت جاری رکھیں گے جس سے افغانستان کے مستقبل میں ہماری سرمایہ کاری کی حفاظت ہوتی ہو“۔

ایلس ویلز

مزید : صفحہ اول