صوبائی حکومت مہاجر دشمنی میں اندھی ہوچکی ہے: ڈاکٹر سلیم حیدر

  صوبائی حکومت مہاجر دشمنی میں اندھی ہوچکی ہے: ڈاکٹر سلیم حیدر

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر)مہاجر اتحاد تحریک کے چیئرمین ڈاکٹر سلیم حیدرنے کہا ہے کہ صوبائی حکومت مہاجر دشمنی میں اندھی ہوچکی ہے۔ سندھ کے شہری اور دیہی علاقوں میں رہنے والے مہاجروں کو دیوار سے لگایا جارہا ہے۔ کراچی اور حیدرآباد جسے مہاجروں نے اپنے خون پسینے سے گل وگلزار بنایا اور اس کی تعمیر وترقی میں جان و مال کے نذرانے دیئے آج اسی کراچی اور حیدرآباد کے 2کروڑ سے زائد مہاجر اقتدار اور اختیار سے محروم کردیئے گئے ہیں۔ مہاجر وں کو معاشی طورپر اس قدر مفلوج کرکے رکھ دیا گیا ہے کہ یہ کاروبار سے لے کر صنعتوں اور ملوں تک میں مہاجروں کے لئے مشکلات پیدا کردی گئی ہیں جس کے باعث مہاجر اب سندھ میں خود کو تیسرے درجے کا شہری تصور کرنے لگے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ایک منصوبے کے تحت بیوروکریسی سے مہاجر فارغ کئے گئے اور ان پر اعلیٰ تعلیم کے دروازے بھی بند کئے جارہے ہیں۔ وفاقی اور صوبائی حکومتیں کراچی اور حیدرآباد کو فتح کرنے کے منصوبے بنارہے ہیں لیکن یہ دونوں شہر مہاجروں کے قلعہ ہیں اور ان کی فصیلوں پر چڑھ کر کوئی یہ سمجھتا ہے کہ وہ انہیں زیر کرلے گا تو وہ اس کی بھول ہے۔ ذوالفقار علی بھٹو جیسے متعصب شخص نے بھی مہاجروں کی صنعتوں، کاروبار اور اداروں کو نیشنلائز کرکے مہاجروں پر اس وقت بھی ملازمت اور تعلیم کے دروازے بند کرنے کے بعد بھی مہاجروں کو ترقی سے نہیں روک سکے تھے اور 77ء کی پی این اے تحریک میں مہاجرعوام نے بھٹو کیخلاف تحریک میں ہراول دستے کا کردار ادا کرکے یہ ثابت کیا تھا کہ ہم اپنے اوپر کسی قسم کی پابندی اور مظالم برداشت نہیں کریں گے۔ اب بھی اگر حکومت یہ سمجھتی ہے کہ مہاجروں پر عرصہ حیات تنگ کرکے انہیں غلام بنالے گی تو یہ اس کی بھول ہے۔

مزید : صفحہ آخر