شادی سے قبل دُلہن کا قتل مقتولہ کا والد شامل تفتیش لیکن کسے گرفتار کرلیا گیا؟ تانے بانے گھر میں ہی ملنے لگے

شادی سے قبل دُلہن کا قتل مقتولہ کا والد شامل تفتیش لیکن کسے گرفتار کرلیا گیا؟ ...
شادی سے قبل دُلہن کا قتل مقتولہ کا والد شامل تفتیش لیکن کسے گرفتار کرلیا گیا؟ تانے بانے گھر میں ہی ملنے لگے

  



لاہور(ویب ڈیسک) گلبرگ میں لڑکی کے پراسرار قتل کا معمہ 24گھنٹے بعد بھی حل نہیں ہوسکا تاہم پولیس نےمقتولہ کے باپ کو شامل تفتیش کرکے لڑکی کو آخری کال کرنے والے شخص کو حراست میں لے لیا۔

لاہور کے علاقے گلبرگ میں گزشتہ روز لڑکی کے قتل کا واقعہ پیش آیا تھا جس میں مسلح افراد لڑکی کو گھر سے اٹھاکر لے گئے اور پھر تھوڑی دور لے جاکر قتل کردیا جب کہ مقتولہ نے تین روزبعد دلہن بننا تھا۔ایف آئی آر کے مطابق مقتولہ حرا کے والد ریاض حسین گزشتہ رات گھر پہنچے تو پتہ چلا کہ حرا گھر میں نہیں، وہ بیٹی کی تلاش میں گھر سے نکلے تو عقبی پارک میں حرا کی لاش مل گئی، نامعلوم افراد اسے گولیاں مار کر فرار ہو گئے تھے ۔ایف آئی آر کے مطابق حملہ آوروں نے مزاحمت کرنے پر حرا کے والد کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا اور ملزمان نے حرا کو 6 گولیاں ماریں۔

جیونیوز کے مطابق  پولیس نے مقتولہ کو آخری کال کرنے والے شخص کو حراست میں لے لیا ہے اور محلے داروں کے بیانات بھی ریکارڈ کر لئے گئے لیکن بہت سے سوالات ابھی جواب طلب ہیں کہ حرا اپنی شادی سے تین روز قبل گھر سے کیسے نکلی اور قریبی پارک کے باہر کسی سے کیوں ملنے گئی ؟ حرا مایوں بیٹھی تھی تو گھر والوں نے کس طرح جانے دیا؟ اگر ملزمان کا مقصد حرا کو ساتھ لے جانا تھا تو اسے قتل کیوں کیا؟ کیا حرا کو کسی دوست نے شادی سے انکار پر قتل کیا اور کیا قتل میں کوئی عزیز بھی ملوث ہوسکتا ہے؟

رپورٹ کے مطابق مقتولہ کے ورثاء سے بھی کچھ پوچھنے کی کوشش کی لیکن انھوں نے انکار کر دیا۔مقتولہ حرابہن بھائیوں میں سب سے چھوٹی تھی، پولیس نے جیو فینسنگ بھی کر لی ہے۔

مزید : جرم و انصاف