اپنی بیگم کی غیر اخلاقی ویڈیو عدالت میں پیش کر کے شوہر نے طلاق لے لی

اپنی بیگم کی غیر اخلاقی ویڈیو عدالت میں پیش کر کے شوہر نے طلاق لے لی
اپنی بیگم کی غیر اخلاقی ویڈیو عدالت میں پیش کر کے شوہر نے طلاق لے لی

  



نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارتی شہر بنگلور میں ایک شوہر نے اپنی بیوی سے طلاق لینے کے لیے عدالت سے رجوع کیا اور ثبوت کے طور پر بیوی کی ایک ایسی ویڈیو عدالت میں پیش کر دی کہ دیکھ کر جج کے بھی گال لال ہو گئے اور اس نے شوہر کے حق میں فیصلہ دے دیا۔

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق اس شخص نے عدالت میں طلاق لینے کی وجہ اپنی بیوی کی بدچلنی بتائی اور بیوی کی ایک ویڈیو عدالت میں پیش کر دی جس میں وہ کسی غیر مرد کے ساتھ رنگ رلیاں منا رہی ہوتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق اس شخص کو اپنی بیوی پر شبہ تھا کہ اس کے دیگر کئی مردوں کے ساتھ ناجائز مراسم ہیں۔ وہ 4جون سے 9جون کے درمیان شہر سے باہر گیا اور اپنے پیچھے گھر کے بیڈروم میں ایک خفیہ کیمرا نصب کرگیا۔ جب وہ واپس آیا اور اس کیمرے کی ریکارڈنگ دیکھی تو اس کا شک یقین میں بدل گیا۔ اس کی غیرموجودگی میں اس کی بیوی نے اپنے آشنا کو گھر بلایااور اس کے ساتھ بیڈروم میں جنسی تعلق قائم کیا جس کی ویڈیو خفیہ کیمرے نے محفوظ کر لی۔

رپورٹ کے مطابق یہ ویڈیو دیکھ کر عدالت نے شوہر کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے ان کی طلاق کروا دی تاہم خاتون نے اس فیصلے کے خلاف ہائیکورٹ میں اپیل دائر کر دی ہے۔ اس نے اپیل میں کہا ہے کہ اس کا شوہر فحش فلمیں بناتا تھا اور اسے مجبور کرکے ان فلموں میں کام کرواتا تھا۔ اس نے انہی میں سے ایک فلم کو عدالت میں بطور ثبوت پیش کیا چنانچہ زیریں عدالت کے فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے۔ واضح رہے کہ ان دونوں کی شادی 1991ءمیں ہوئی تھی اور ان کے چار بچے بھی ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس