”اگر سندھ میں مرناہے تو دوہزار روپے ہونے چاہئیں ورنہ۔۔۔“ارشاد بھٹی کا حیران کن انکشاف

”اگر سندھ میں مرناہے تو دوہزار روپے ہونے چاہئیں ورنہ۔۔۔“ارشاد بھٹی کا ...
”اگر سندھ میں مرناہے تو دوہزار روپے ہونے چاہئیں ورنہ۔۔۔“ارشاد بھٹی کا حیران کن انکشاف

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) تجزیہ کار ارشاد بھٹی نے کہاہے کہ پچھلے دوماہ میں ہم نے جتنی ایک بندے کی صحت پر بحث کی ہے اس طرح صحت ہماری بحث کا حصہ کس طرح بنے گی ؟ اگر سندھ میں مرناہے تو دوہزار روپے ہونے چاہئے ورنہ ایمبو لینس نہیں ملے گی ۔

جیونیوز کے پروگرام ”رپورٹ کارڈ“میں گفتگو کرتے ہوئے ارشاد بھٹی نے کہا کہ صحت ہماری بحث کا حصہ نہیں ہے ، پچھلے دوماہ میں ہم نے جتنی ایک بندے کی صحت پر بحث کی ہے اس طرح صحت ہماری بحث کا حصہ کس طرح بنے گی ۔ انہوں نے کہا کہ غریب آدمی کی صحت پر کوئی بحث نہیں کرتا ، ہمارے بچوں کامستقبل اس وقت محفوظ ہوگا جب بڑوں کے بچے اور ہمارے بچے ایک ہسپتال اور ایک سکول میں جائیں گے ۔

انہوں نے کہا کہ اس حکومت نے پل اور سڑکیں نہیں بنوانی تھیں لیکن صحت اور تعلیم کاحال سب کے سامنے ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اگر سندھ میں مرناہے تو دوہزار روپے ہونے چاہئے ورنہ ایمبو لینس نہیں ملے گی ۔ انہوں نے کہا کہ ان سیاستدانوں کی جیلوں اور حوالاتوں میں خالص شہد اورزیتون کا تیل ملتاہے ، ہمارے سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے سرکاری ہسپتال میں آپریشن کروانے سے انکار کردیاہے ،اس لئے ہمارے بچے ایسے ہی مرتے رہیں گے ۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد