ہائیکورٹ نے انتخابی جانچ پڑتال کےخلاف سیف الملکوک کھوکھر کی درخواست خارج کردی

ہائیکورٹ نے انتخابی جانچ پڑتال کےخلاف سیف الملکوک کھوکھر کی درخواست خارج ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے صوبائی اسمبلی کی حلقہ پی پی 160کے انتخابی ریکارڈ کی جانچ پڑتال کے خلاف مسلم لیگ (ن )کے ایم پی اے سیف الملکوک کھوکھر کی درخواست خارج کردی ۔لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس سید منصور علی شاہ نے مسلم لیگ ن کے رکن پنجاب اسمبلی سیف الملوک کھوکھر کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کے موقف اختیار کیا کہ الیکشن ٹربیونل ان کے خلاف پاکستان تحریک انصاف کے ناکام امیدوار ظہیر عباس کھوکھر کی طرف سے دائر انتخابی عذرداری پر کارروائی کر رہا ہے اور ٹربیونل نے عوامی نمائندگی ایکٹ کی دفعہ 46کے تحت اس حلقے کے انتخابی ریکارڈ کی جانچ پڑتا ل کا حکم دیا ہے ، درخواست گزار کے مطابق ریکارڈ کی جانچ پڑتال کیلئے ٹربیونل کے ایک انکوائری کمیشن بھی تشکیل دے دیاگیا ہے ،درخواست گزار کے مطابق ٹربیونل کا دائرہ کار محدود ہوتا ہے اس لئے ریکارڈ کی جانچ پڑتا ل اور اسکے لئے انکوائری کمیشن کی تشکیل نہیں کی جا سکتی لہذا ریکارڈ کی جانچ پڑتا ل اور کمیشن کی تشکیل کے عبوری فیصلے کالعدم کئے جائیں، سماعت کے بعد عدالت نے درخواست خارج کرتے ہوئے قرار دیا کہ آئین کے آرٹیکل 199کے تحت یہ درخواست ناقابل سماعت ہے کیونکہ ہائیکورٹ کا فل بنچ یہ اصول طے کر چکا ہے کہ الیکشن ٹربیونل کے عبوری فیصلوں کے خلاف ہائیکورٹ سے رجوع نہیں کیا جا سکتا۔

سیف الملکوک

مزید : صفحہ آخر