بزرگ پنشنرز کو فل پنشن ادا نہ کرنے پر ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ طلب

بزرگ پنشنرز کو فل پنشن ادا نہ کرنے پر ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے 70سال سے زائد عمر کے پنشنرز کو عدالتی حکم کے باوجود فل پنشن ادا نہ کرنے پر ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو 24اکتوبر کیلئے طلب کر لیا۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شمس محمود مرزا نے نور محمد سمیت 12بزرگ پنشنرز کی طرف سے دائر توہین عدالت کی درخواستوں پر سماعت کی، درخواست گزاروں کی طرف سے سمرا ملک ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ ریٹائرمنٹ کے وقت سرکاری ملازمین کو آدھی پنشن ادا کی جاتی ہے اور باقی کی 25فیصد پنشن حکومت 15برس بعد ادا کرتی ہے، انہوں نے بتایا کہ سپریم کورٹ نے یہ اصول طے کردیا ہے کہ ان پندرہ برسوں کے دوران حکومت کی طرف سے پنشن میںجو اضافہ کیا جائیگا وہ بھی 50فیصد قابل ادا پنشن کے ساتھ ملے گا مگر سپریم کورٹ کے فیصلے کے باوجود پنجاب حکومت بزرگ پنشنرز کے ساتھ غیرانسانی سلوک کر رہی ہے اور انہیں فل پنشن ادا نہیں کی جا رہی، سرکاری وکیل نے بتایا کہ محکمہ خزانہ کی طرف سے ابھی جواب داخل نہیں کرایا گیا ، عدالت نے دونوں طرف سے دلائل سننے کے بعد ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو 24اکتوبر کیلئے طلب کر لیا۔

بزرگ پنشنرز

مزید :

صفحہ آخر -