الپوری ہسپتال میں زیر تعمیر سپورٹس گراؤنڈ تاحال مکمل نہ ہو سکا

الپوری ہسپتال میں زیر تعمیر سپورٹس گراؤنڈ تاحال مکمل نہ ہو سکا

الپوری (ڈسٹرکٹ رپورٹر) شانگلہ کے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر الپوری میں زیر تعمیر پلے گراؤنڈ دو سال گزرنے کے باجود بھی پایہ تکمیل تک نہ پہنچ سکا ۔ ایک کروڑہ سے زائید کی لاگت سے شروع ہونے والے منصوبے میں ایڈوانس ساٹھ لاکھ روپے نکالنے کا انکشاف کیا گیا ہے جبکہ ٹھیکیدار نے منصوبے کا بیس فیصد کام بھی نہیں کیا۔ گراؤنڈ کی بنیادوں میں ناقص میٹریل کا استعمال ہورہا ہے ۔ گراؤند کی باؤنڈری وال کی بنیادوں میں بڑے بڑے پتھر اور مٹی ڈال کر سیمینٹ کا معمولی سا پلم کرکے پورے کا پورا دو فٹ ظاہر کرتے ہیں۔ ناقص میٹریل کے استعمال سے اب باؤنڈری وال کی بنیادیں توڑتی جارہی ہے ، ناقص میٹریل کا استعمال اور منصوبے میں سست روی کے باوجود محکمہ سی اینڈ ڈبلیو ٹھیکیدار کے حامی نظر آرہی ہے، حکومت خیبر پختونخوا کی جانب سے ہر ضلع کے سطح پر شروع ہونے والی گراؤنڈ تو الپوری بننے کا باقاعدہ طور پر افتتاح دو سال قبل ہوا تا ہم دو سال گزرنے کے باوجود تعمیر نہ ہوسکا۔ اگر چہ موجودہ صوبائی حکومت کی تعمیری پالیسی یہ ہے کہ تمام اس نوعیت کے منصوبے چھ ماہ سے لیکر ایک سال تک مکمل کرنے ہیں، پھر ضلع شانگلہ میں صورتحال مختلف کیوں ہے؟ منصوبے میں ناقص میٹریل کا استعمال سے پتہ چلتا ہے کہ محکمہ سی اینڈ ڈبلیو ٹھیکیداران سے منصوبے میں بھاری کمیشن لیکر ان تمام حالات پر چشم پوشی کر رہے ہیں اور ٹھیکیدار اپنے آپ کو مکمل طور ازاد سمجھ کر ناقص میٹریل کا استعمال کرتے ہیں ، محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے دفتر سے چندمنٹوں کے فاصلے پر یہ ناقص میٹریل کا استعمال ان کے چہروں پر سوالیہ نشان بنا ہوا ہے ، گراؤنڈ کی تعمیر میں مسلسل تاخیر کی وجہ سے سکولوں سمیت دیگر کھلاڑیوں کی کھیلوں کے مشق متاثر ہور ہے ہیں ، رواں ماہ کے پچیس تاریخ سے سکولوں کے ٹورنامنٹس شروع ہورہے ہیں تا ہم ان کو تا حال کھیل کرنے کے مشق کیلئے کوئی بھی پلے گراؤنڈ مہیا نہیں کی گئی ، اب یہ کہ ان حالات میں سرکاری سطح پر ٹورنامنٹس کا انعقاد کامیاب رہے گا یا نہیں ، پلے گراؤنڈ کیلئے مخصوص شدہ زمین میں جگہ جگہ بڑے بڑے پتھر اور کھڈے موجود ہیں جن میں بدوران کھیل کھلاڑیوں کے گرنے کے زیادہ مواقع موجود ہیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر