پاکستانی تاجر رشاکئی نوشہرہ اقتصادی زون میں سرمایہ کاری کریں ،سربراہ چینی کارپوریشن

پاکستانی تاجر رشاکئی نوشہرہ اقتصادی زون میں سرمایہ کاری کریں ،سربراہ چینی ...

اسلام آباد ( آن لائن ) چائنہ روڈ اینڈ بریج کارپوریشن (سی آر بی سی) کے ایک وفد نے کاروپوریشن کے مارکٹنگ ہیڈ وانگ مارتنگ کی قیادت میں اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسری کا دورہ کیا اور تاجر برادری کو سی پیک منصوبے کے تحت بننے والے رشاکئی اسپیشل اکنامک زون میں سرمایہ کاری کے مواقعوں کے بارے میں ایک تفصیلی پریزنٹیشن دی۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سی بی آر سی کے مارکٹنگ ہیڈ وانگ مارتنگ نے کہا کہ رشاکئی اسپیشل اکنامک زون تمام جدید سہولیات سے لیس ہو گا جس میں میٹل پراسسنگ، فوڈ پراسسنگ، آٹوموبائل، کنسٹریکشن میٹریل، الیکٹرانکس اور چمڑے کی مصنوعات تیار کرنے والی صنعتوں سمیت دیگر صنعتیں لگائی جا سکیں گی۔ انہوں نے کہا کہ رشاکئی اسپیشل اکنامک زون میں صنعتیں لگا کر سرمایہ کار سنٹرل ایشیاء، مشرق وسطیٰ اور دیگر ممالک کو اپنی مصنوعات برآمد کر سکیں گے۔ انہوں نے رشاکئی اسپیشل اکنامک زون کو پروموٹ کرنے کیلئے چیمبر کے ساتھ ایک معاہدہ کرنے کی خواہش کا بھی اظہار کیا۔ پریزنٹیشن دیتے ہوئے سی بی آر سی کے مارکٹنگ ایڈوائزر خرم خان نے کہا کہ رشاکئی سی پیک منصوبے کے تحت بننے والا پہلا اسپیشل اکنامک زون ہے جو پائلٹ پراجیکٹ کے طور پر تعمیر کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس زون میں سرمایہ کاری کرنے پر تاجر برادری کو متعدد فوائد حاصل ہوں گے کیونکہ ان کو انکم ٹیکس پر دس سال کی چھوٹ دی جائے گی اور صنعتی یونٹس لگانے کیلئے مشینری کی درآمد پر ایک مرتبہ کسٹم ڈیوٹی کی چھوٹ دی جائے گی۔ تاہم انہوں نے کہا کہ سی بی آر سی حکومت کے ساتھ کوشش کر رہی ہے کہ انکم ٹیکس چھوٹ کو دس سال سے بڑھا کر تیس سال تک کر دیا جائے۔انہوں نے کہا کہ مذکورہ زون میں سرمایہ کاری کیلئے بینک سے قرضہ لینے کی صورت میں حکومت پچاس فیصد مارک اپ کی ادائیگی کرے گی۔مثال کے طور پر مارک اپ اگر دس فیصد ہے تو پانچ فیصد حکومت ادا کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ رشاکئی اسپیشل اکنامک زون ضلع نوشہرہ میں ایک ہزار ایکڑ رقبے پر قائم کیا جائے گا جو پشاور سے 60کلومیٹر اور اسلام آباد سے 100کلو میٹر ہے ۔ تاہم انہوں نے کہا کہ ڈیمانڈ بڑھنے کی صورت میں رقبے کو مزید وسعت دی جا سکتی ہے۔انہوں نے مقامی تاجر برادری پر زور دیا کہ وہ مذکورہ زون میں سرمایہ کاری کے مواقع تلاش کرنے کی کوشش کریں۔ اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر احمد حسن مغل نے مطالبہ کیا کہ رشاکئی اسپیشل اکنامک زون میں مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو سرمایہ کاری کیلئے مساوی مواقع فراہم کئے جائیں کیونکہ غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ترجیحی مراعات دینے سے مقامی صنعت متاثر ہو گی۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت سی پیک کے تحت بننے والے اسپیشل اکنامک زون میں چیمبر کے ممبران کو پلاٹوں کی خریداری پر اسپیشل ڈسکاؤنٹ دینے پر غور کرے تا کہ زیادہ سے زیادہ ممبران کو ان زونز میں سرمایہ کاری اور جوائنٹ وینچرز کیلئے آماد ہ کیا جائے۔

اس موقع پر تاجر برادری نے رشاکئی اسپیشل اکنامک زون میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے کیلئے مفید تجاویز پیش کیں۔ چائنہ روڈ اینڈ بریج کارپوریشن کے وفد نے یقین دہانی کرائی کہ تاجر برادری کی تجاویز اور تحفظات کو متعلقہ حکام تک پہنچایا جائے گا تا کہ ان پر مناسب غورکیا جائے۔ #/s#

مزید : کامرس