”میں نے محمد بن سلمان سے بات کی ہے اور وہ بہت جلد ۔۔۔“ وزیر اعظم عمران خان نے پاکستانیوں کو خوشخبری سنادی

”میں نے محمد بن سلمان سے بات کی ہے اور وہ بہت جلد ۔۔۔“ وزیر اعظم عمران خان نے ...
”میں نے محمد بن سلمان سے بات کی ہے اور وہ بہت جلد ۔۔۔“ وزیر اعظم عمران خان نے پاکستانیوں کو خوشخبری سنادی

  


ریاض (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ انہوں نے سعودی ولی عہد سے بات کی ہے اور وہ بہت جلد سعودی سرمایہ کاروں کو لے کر پاکستان آرہے ہیں۔

سعودی عرب میں جاری عالمی سرمایہ کاری کانفرنس کے سوال و جواب سیشن کے دوران وزیر اعظم عمران خان نے بتایا کہ پاکستان میں سرمایہ کاروں کیلئے ساز گار ماحول کی ضرورت ہے کیونکہ ہماری خراب گورننس کی وجہ سے پاکستان سے سرمایہ کاری واپس چلی گئی ۔ سرمایہ کاروں کو مواقع کی فراہمی کیلئے ڈیوٹی سٹرکچراور ٹیکس کا نظام ری سٹرکچر کر رہے ہیں تاکہ سرمایہ کار پاکستان آسکیں۔سی پیک کی وجہ سے ہم گوادر بندرگاہ بنا رہے ہیں ، خصوصی اقتصادی زون بنا رہے ہیں،سی پیک پاکستان کیلئے بہت بڑا موقع ہے۔ چین بہت بڑی مارکیٹ ہے اور سی پیک اسے گوادر سے جوڑتا ہے ہمارے پاس اقتصادی زونز ہیں اور ہم لوگوں کو سرمایہ کاری کی دعوت دے رہے ہیں، پاکستان بہت ہی سٹریٹجک اہمیت کا حامل ہے جہاں سے پوری دنیا کے ساتھ رابطہ ہوسکتا ہے۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ سرمایہ کار پاکستان میں معدنیات کے شعبے میں سرمایہ کاری کرسکتے ہیں کیونکہ ہمارے پاس کوئلے اور کاپر کے سب سے بڑے ذخائر ہیں، ہمارے پاس گیس کے ایسے بہت سے ذخائر ہیں جنہیں کبھی ہاتھ ہی نہیں لگایا گیا۔ سیاحت کے شعبے میں بھی سرمایہ کاری کی جاسکتی ہے کیونکہ پاکستان کے پاس بہترین سیاحتی مقامات ہیں۔ ہمارے پاس 12 موسم ہیں ہمارے پاس دنیا کی سب سے پرانی تہذیب ہے، ہمارے پاس دنیا کا سب سے پرانا شہر ہے، گزشتہ دو سال میں ہم نے سیاحت کے شعبے میں تمام ریکارڈ توڑے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے پاس معدنیا ت کے شعبے میں سرمایہ کاری نہ ہونے کے برابر ہے جس کی وجہ دہشتگردی کے خلاف جنگ ہے۔ دہشتگردی کی وجہ سے سرمایہ کار پاکستان نہیں آئے گزشتہ 10 سال میں کرپشن اور بیڈ گورننس رہی لیکن پاک فوج کے باعث ہم نے دہشتگردی پر قابو پالیا ہے افغانستان سے آنے والی دہشتگردی کا ابھی بھی اندیشہ ہے اگر افغانستان میں امریکہ اور طالبان کے مذاکرات کامیاب ہوجاتے ہیں تو ہمیں بھی فائدہ ہوگا۔60 کی دہائی میں پاکستان ایشیا میں سب سے زیادہ تیزی سے ترقی کر رہا تھا لیکن بری گورننس اور80 میں افغان جہاد میں پھنس گئے، 9/11 کے بعد ہم دہشتگردی میں الجھ گئے ۔یہی وجہ ہے کہ ہم سرمایہ کاری کھوبیٹھے لیکن اب پاکستان محفوظ اور تیار ہے اب سرماریہ کاروں کیلئے پاکستان میں سرمایہ کاری کا بہترین موقع ہے۔

سعودی بزنس گروپ کے نمائندے کی جانب سے سوال کیا گیا کہ پاکستان اور سعودی عرب میں بہترین تعلقات ہیں ۔ پاکستان کے ہنر مند افراد سعودی عرب کی ترقی میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں لیکن اب سعودی سرمایہ کار بھی پاکستان میں سرمایہ کاری کرنا چاہتے ہیں تو اس حوالے سے آپ کی حکومت کیا کررہی ہے۔ عمران خان نے کہا کہ انہوں نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے بات کی ہے اور وہ بہت جلد سعودی سرمایہ کاروں کو لے کر پاکستان آرہے ہیں۔ہم سعودی عرب کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں کہ وہ پاکستان میں آئل ریفائنری لگائیںاس سے پاکستان اور سعودی عرب کے تعاون میں مزید اضافہ ہوگا، اس سلسلے میں ہم نے سعودی سرمایہ کاروں سے بھی ملاقات کی ہے۔

ایک بھارتی شہری کی جانب سے پوچھے گئے سوال پر عمران خان نے کہا کہ انفارمیشن ٹیکنالوجی بھی ایک شعبہ ہوسکتا ہے جس سے ہم اپنی برآمدات بڑھاسکتے ہیں لیکن بدقسمتی سے ہم نے اس پر انڈیا کی طرح فوکس نہیں کیا۔

مزید : قومی