افغان فوج کے مسجد پر فضائی حملے میں بچے اور امام مسجد شہید، حکومتی موقف بھی آگیا

افغان فوج کے مسجد پر فضائی حملے میں بچے اور امام مسجد شہید، حکومتی موقف بھی ...
افغان فوج کے مسجد پر فضائی حملے میں بچے اور امام مسجد شہید، حکومتی موقف بھی آگیا

  

قندوز(ویب ڈیسک) افغان فوج کے ایک مسجد پر فضائی حملے کے نتیجے میں 11 طالبعلم اور امام مسجد جاں بحق ہوگئے جبکہ اس حملے پر حکومت کا موقف مقامی انتظامیہ کے موقف سے مختلف ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق صوبائی پولیس کے ترجمان خلیل اسیر نے بتایا کہ گزشتہ روز افغان فوج اور طالبان جنگجوو¿ں کے درمیان لڑائی جاری تھی کہ اس دوران صوبہ تخار کے ایک گاو¿ں پر یہ فضائی حملہ کیا گیا، حملہ اس وقت ہوا جب متاثرہ افراد قرآن پڑھنے میں مصروف تھے، انہوں نے مزید بتایا کہ حملے میں امام مسجد سمیت 11 طالبعلم جاں بحق جبکہ 14 افراد زخمی ہوئے ہیں۔

صوبائی گورنر کے ترجمان محمد جواد ہِجری نے بھی بتایا کہ فضائی حملے میں بچے جاں بحق ہوئے ہیں تاہم وزارت دفاع کی جانب سے افغان فضائیہ کے حملے کی تصدیق کی گئی لیکن اس کے نتیجے میں شہریوں کے جاں بحق ہونے کی تردید کی ۔وزارت دفاع کے جاری بیان میں کہا گیا کہ '12 طالبان کو مار دیا گیا ہے جس میں متعدد کمانڈرز بھی شامل تھے'۔دوسری جانب افغانستان کے نائب صدر امراللہ صالح کا کہنا تھا کہ مسجد میں بچوں کے مارے جانے کی خبر 'بے بنیاد' ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -