گوانتاناموبے سے کلیئر ہونیوالے 55قیدیوں کی فہرست جاری

گوانتاناموبے سے کلیئر ہونیوالے 55قیدیوں کی فہرست جاری

واشنگٹن(اے پی اے )امریکا نے گوانتا نا موبے سے کلئیر ہونے والے 55 قیدیوں کی فہرست جاری کر دی۔ ان قیدیوں کو دوسرے ملکوں کے حوالے کیا جائے گا ،یا رہا کیا جائے گا۔ آبائی ممالک کی جانب سے قبول نہ کئے جانے پر یہ قیدی گوانتاناموبے میں رہنے پر مجبور ہیں۔ قیدیوں میں زیادہ کا تعلق یمن سے ہے۔ گوانتاناموبے میں ابھی بھی دہشت گردی کے خلاف جنگ کے 167 ملزم قید ہیں۔ گوانتاناموبے ریو ٹاسک فورس نے 68 قیدیوں کی رہائی کی منظوری دی تھی۔ گوانتاناموبے حکام کا کہنا ہے کہ کچھ قیدوں کو ابھی رہا کرنا سیکیورٹی خدشات میں اضافہ کرسکتا ہے۔ دوسری جانب امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کا کہنا ہے کہ بد نام زمانہ گوانتانا موبے جیل امریکی حکومت کے انصاف پر بد ترین دھبہ ہے جس میں 167بے گناہ افراد اپنی زندگی کے بد ترین دن گزار رہے ہیں ۔یہ سفاکانہ جیل امریکی عزت کو روز بروز کم کر رہی ہے۔تفصیلات کے مطابق جنوری 2000میں امریکی بد نام زمانہ جیل گوانتاناموبے میںیمن سے تعلق رکھنے والے القاعدہ کے مبینہ رکن عبد اللطیف نے خود کشی کر لی ہے۔رپورٹ کے مطابق10سال قبل عبد اللطیف کو پاکستانی حکومت نے امریکہ کے حوالے کر دیا تھا جسے بد نام زمانہ جیل میں قید کر دیا گیا تھا۔رپورٹ کا کہنا ہے کہ یمن سے تعلق رکھنے والے اس شخص سے متعلق ایک بھی ثبوت نہیں ملا کہ اس کا کسی شدت پسند جماعت کے ساتھ تعلق ہے ۔ رپورٹ کا کہنا ہے کہ یمن سے تعلق رکھنے والا یہ شخص ایک اکسیڈنٹ میں زخمی ہونے کے بعد علاج معالجے کے لیئے پاکستان آیا تھا جسے پاکستانی حکومت نے القاعدہ سے تعلق کے شبے میں امریکہ کے حوالے کر دیا۔پورٹ کا کہنا ہے کہ اپنی زندگی کے بھیانک ترین دن گزارنے کے بعد لطیف نے بھوک ہڑتال کر دی جس کے باعث وہ ہلاک ہو گیا۔اخبار کا کہنا ہے کہ امریکی حکومت کی بے حسی سے بے قصور لوگ طویل قید کاٹنے کے بعد ہلاک ہو رہے ہیں جس پر نسانی حقوق کی تنظیموں اور انتظامیہ بالکل خاموش ہیں جو کہ لمحہ فکریہ ہے۔

مزید : صفحہ آخر