روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی پر چین سے بات کی جائے،مولانا عبدالمالک

روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی پر چین سے بات کی جائے،مولانا عبدالمالک

جدہ (محمد اکرم اسد ) امیر مرکزی جمیت اہلحدیث سعودی عرب و معروف مذہبی اسکالر مولانا عبدالمالک مجاہد نے کہا ہے کہ برما کے مسلمانوں کی مظلومیت اس بات کا تقاضہ کرتی ہے کہ تمام مسلم ممالک او آئی سی سمیت ہر فورم پر پوری شدت سے اس ظلم کے خلاف آواز بلند کریں۔ اگر مسلمان حکومتوں نے اپنا کردار ادا نہ کیا چاہے وہ انفرادی کردار ہو یا اجتماعی تو یہ ایسا ہی ہے جس طرح ایک زمانے میں اندلس اسپین میں ہمارے ساتھ ہوا کہ آٹھ سوسال مسلمانوں کی حکومت رہی اورجس طرح وہاں مسلمانوں کی حکومت کو ختم کیا گیا اسی طرح برما میں ختم کیا جارہا ہے۔ یہ بات انھوں نے جدہ کے مقامی ہوٹل میں مرکزی جمعیت اہلحدیث سعودی عرب کے کارکنوں کے اجلاس میں بطور مہمانِ خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اجلاس کا آغاز جمعیت اہلحدیث سعودی عرب کے جنرل سیکریٹری مولانا مختار احمد عثمانی نے خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے کیا۔ انھوں نے برمی مسلمانوں کی حالت زار پرافسوس کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہا جس طرح برمی افواج بے بس اور لاچار نہتے روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی کررہی ہے اسے دیکھ کر انسانیت لرز گئی۔ برمی فوج کے ہاتھوں ظلم و جبر کی تاریخ کا سیاہ ترین باب رقم کیا جارہا ہے۔ انھوں نے سعودی حکومت کی جانب سے روہنگیا کے مظلوم مسلمانوں کیلئے 15 ملین ڈالر مختص کرنے کی تعریف کی اور کہا ملت اسلامیہ خاص طور سے پاکستان اور سعودی عرب کو چین کے ساتھ مل کر اس موضوع پر بات کرنی چا ہئے اور اپنے مظلوم دینی بھائیوں کی مدد کیلئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہیے ۔مولانا عبدالمالک مجاہد نے کہا کہ مکہ میں 25فیصد برمی مسلمانوں کو آباد کیا گیاہے۔

نسل کشی

مزید : صفحہ آخر