ترک مقابلہ حسن کی فاتح حسینہ کو متنازعہ بیان مہنگا پڑ گیا 

ترک مقابلہ حسن کی فاتح حسینہ کو متنازعہ بیان مہنگا پڑ گیا 
ترک مقابلہ حسن کی فاتح حسینہ کو متنازعہ بیان مہنگا پڑ گیا 

  

استنبول (آن لائن) ترکی کے قومی مقابلہ حسن کی فاتح حسینہ کو گذشتہ برس ملک میں ہونے والی ناکام فوجی بغاوت کی کوشش پر اپنے خیالات کا اظہار کرنا مہنگا پڑگیا اور انہیں اپنے اعزاز سے ہاتھ دھونا پڑے۔ 18 سالہ اِتر ایسن سے گذشتہ روز 'مِس ترکی' کا اعزاز واپس لے لیا گیا۔واضح رہے کہ 18 سالہ حسینہ 21 ستمبر کو استنبول میں منعقد ہونے والی ایک تقریب میں مِس ترکی 2017 منتخب ہوئی تھیں اور چین میں ہونے والے مِس ورلڈ کے مقابلے میں اپنے ملک کی نمائندگی کرنے والی تھیں۔مِس ترکی ایونٹ کا انعقاد کرنے والے آرگنائزرز کا کہنا ہے کہ 15 جولائی 2016 کو صدر رجب طیب اردگان کی حکومت کے خلاف بغاوت کی کوشش کے ایک سال مکمل ہونے پر ترک حسینہ نے ناقابل قبول ٹوئیٹ کی تھی۔

منتظمین کے مطابق اس ٹوئیٹ کے سامنے آنے کے بعد ان کا یہ اعزاز رکھنا ممکن نہیں رہا۔واضح رہے کہ اپنی ٹوئیٹ میں اِتر ایسن نے ناکام فوجی بغاوت کے دوران جان سے ہاتھ دھو بیٹھنے والے 249 افراد کی خون ریزی کو اپنے ایامِ حیض کے خون سے تشبیہہ دی تھی۔ترکی میں ناکام فوجی بغاوت کے نتیجے میں جان سے جانے والے ان افراد کی قربانی کو عظیم الفاظ میں یاد کرتے ہوئے شہید قرار دیا جاتا ہے۔ایونٹ کے منتظمین کا کہنا تھا کہ انہوں نے یہ متنازع ٹوئیٹ مقابلہ حسن کے نتائج جاری کرنے کے بعد دیکھی اور اس پیغام کی تصدیق کے لیے کئی گھنٹے طویل اجلاس کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ اس مقابلے کا انعقاد کرانے والی تنظیم کا مقصد دنیا بھر میں ترکی کو فروغ دینا ہے اور اس قسم کا بیان برداشت نہیں کیا جاسکتا۔18 سالہ اتر ایسن سے اعزاز لیے جانے کے بعد اسے دوسری پوزیشن حاصل کرنے والی اصلی سومن کے حوالے کردیا گیا اور اب اصلی سومن ہی 18 نومبر کو چین میں اپنے ملک کی نمائندگی کریں گی۔

دوسری جانب اعزاز سے ہاتھ دھو بیٹھنے والی ترک حسینہ کا اپنے انسٹاگرام اکانٹ پر کہنا تھا کہ انہوں نے یہ ٹوئیٹ بیدھیانی میں کی تھی اور اس کا کوئی سیاسی مقصد نہیں تھا۔اتر ایسن نے انسٹاگرام پوسٹ میں اس غلط فہمی پر معذرت کرتے ہوئے لکھا، میں کہنا چاہتی ہوں کہ بحیثیت 18 سالہ لڑکی میری ٹوئیٹ کا کوئی سیاسی مقصد نہیں تھا، میں نے حساس وقت میں اپنے معصومانہ خیالات کا ذکر کیا، میرے اہل خانہ نے مجھے اپنے وطن اور قوم کا احترام کرنا سکھایا ہے جبکہ میری شخصیت ایسی نہیں کہ میں شہدا کی بیحرمتی کروں۔

مزید : تفریح