چین کو کورونا پھیلانے کا ذمہ دار ٹھہرایا جائے: صدر ٹرمپ، مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے: اردوان 

    چین کو کورونا پھیلانے کا ذمہ دار ٹھہرایا جائے: صدر ٹرمپ، مسئلہ کشمیر ...

  

 واشنگٹن(اظہر زمان، بیورو چیف) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ چین کو دنیا میں کرونا وائرس پھیلانے کا ذمہ دار قرار دیا جائے۔ انہوں نے جنرل اسمبلی سے اپنے پہلے سے ریکارڈ شدہ مختصر خطاب میں چین پر اس سلسلے میں شدید نکتہ چینی کی۔ اس کے ساتھ ساتھ انہوں نے اقوام متحدہ کو بتایا کہ اس افتاد کے امریکہ پہنچنے کے بعد انہوں نے پوری جانفشانی سے اس کا مقابلہ کیا۔ صدر ٹرمپ نے معمول کے مطابق سات منٹ کے اس خطاب میں بھی کرونا وائرس کو ”چائنا وائرس“ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہم اس نہ نظر آنے والے دشمن کے خلاف شدید جنگ میں مصروف ہیں جس نے 188 ممالک میں بے شمار افراد کو ہلاک کر دیا ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ ہمیں روشن مستقبل کی طرف بڑھتے ہوئے چین کو ذمہ دار قرار دینا ہو گا جس نے کرونا کے طاعون سے باقی دنیا پر وار کیا ہے۔ صدر ٹرمپ بلا شک چین پر الزام لگا رہے ہیں لیکن ان کی انتظامیہ کا اس وائرس سے نمٹنے کے لئے جو ٹریک ریکارڈ ہے اس پر مخالفین کی طرف سے سخت نکتہ چینی جا رہی ہے۔ خصوصاً مخالف ڈیمو کریٹک صدارتی امیدوار جو بیڈن اور پارٹی کے دوسرے اہم لیڈر یہ سمجھتے ہیں کہ صدر ٹرمپ نے اس وائرس کا مقابلہ اتنی مہارت سے نہیں کیا جتنی کہ ضرورت تھی۔ امریکہ میں دنیا بھر میں سب سے زیادہ اموات صدر ٹرمپ کی نا اہلی کے باعث ہوئی ہیں۔ مخالف لیڈروں کا موقف یہ ہے کہ کرونا وائرس ابھی کنٹرول میں نہیں تھا کہ انہوں نے کاروبار شروع کرنے کی حوصلہ افزائی کی اور اس طرح یہ وائرس بیقابو ہوتا چلاگیا۔ تاہم صدر ٹرمپ کا ابتداء سے ہی یہ موقف ہے کہ چین نے کرونا وائرس کو مصنوعی طور پر پیدا کرکے دنیا میں نقصان پھیلانے کے لئے اسے جان بوجھ کر برآمد کیا۔

ٹرمپ

  اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک این این آئی)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھارت اپنے جارحانہ عزائم کے سبب پورے خطے کے امن و امان کو داؤ پر لگا رہا ہے،نہتے کشمیریوں کو بھارتی استبداد سے نجات دلانے کیلئے عالمی برادری کو آگے آنا ہوگا، وزیراعظم اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب میں کشمیر کی صورتحال دنیا بھر کے سامنے رکھیں گے اور عالمی برادری کی توجہ بھارتی مظالم کی طرف مبذول کروائیں گے،پاکستان، مسئلہ کشمیر کو ہر فورم پر اٹھاتا رہے گا جب تک کشمیریوں کو اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کی قراردادوں کی روشنی میں ان کا جائز حق، حق خود ارادیت انہیں مل نہیں جاتا۔ منگل کو خصوصی کمیٹی برائے کشمیر کا چھٹا اجلاس وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کی زیرِ صدارت، وزارتِ خارجہ میں منعقد ہواجس میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری انسانی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور لائن آف کنٹرول (ایل او سی) پر بھارتی اشتعال انگیزی سمیت مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔اجلاس میں وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے قومی سلامتی معید یوسف، پارلیمانی سیکرٹری برائے قانون بیرسٹر ملیکہ بخاری، سیکرٹری قانون راجہ نعیم اکبر، سمیت سول و عسکری حکام نے شرکت کی۔وزیر خارجہ نے کہاکہ بین الاقوامی قوانین کو پس پشت ڈالتے ہوئے بھارت کی طرف سے مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی مسلسل پایمالیوں اور لائن آف کنٹرول پر بلا اشتعال فائرنگ انتہائی تشویشناک ہے۔مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہاکہ ہم بی جے پی حکومت کی ہندوتوا پالیسیوں اور بھارت کے توسیع پسندانہ عزائم سے پوری دنیا کو باخبر رکھے ہوئے ہیں۔ شاہ محمود قریشینے کہا کہمقبوضہ کشمیر کے عوام استصواب رائے کے منتظر ہیں، وادی میں اقوام متحدہ کی قراردادوں اور فیصلوں کی دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں، آنے والی نسلوں کو جنگ کے عفریت سے بچایا جائے۔۔اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹریس نے اجلاس سے خطاب میں کہا کہ دنیا کو کثیر الجہتی چیلنجز درپیش ہیں مگر انکا کثیرالجہتی حل نہیں ہے، کوئی عالمی حکومت نہیں چاہتا، گورننس کی بہتری کے لیے مل کر کام کرنا ہوگا۔چین کے صدر نے اجلاس سے ورچوئل خطاب میں انصاف، باہمی احترام اور برابری پر زور دیا۔ شی جن پنگ کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کو امن کا دامن تھامے رکھنے کی ضرورت ہے، اقوام متحدہ کے نظام کو مضبوط ہونا چاہیے۔جرمن چانسلر اینگلا مرکل نے کہا کہ دنیا کو سرحدوں سے نکل کر سوچنا ہوگا، تمام ممالک سرحدوں سے نکل کر ایک دوسرے سے تعاون کریں۔ترکی کے صدر رجب طیب اردوان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں مسئلہ کشمیر ایک مرتبہ پھر اٹھاتے ہوئے کہاہے کہ مسئلہ اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے۔اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے ترکی کے صدر رجب طیب اردوان کا کہنا تھا کہ جنوبی ایشیا میں امن کے لیے مسئلہ کشمیر کو حل ہونا چاہیے۔ بات کو جاری رکھتے ہوئے رجب طیب اردوان کا کہنا تھا کہ یہ تنازع اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے، کیونکہ جنوبی ایشیا میں امن کا انحصار مسئلہ کشمیر پر ہے۔اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ دنیا بھر میں امن اور انسانیت کیلئے ا?واز اٹھاتے رہیں گے، اپنے موقف سے دستبردار نہیں ہوں گے، یونان کے مسئلہ پر مذاکرات کیلئے تیار ہیں۔ترک صدر کا مزید کہنا تھا کہ شام میں ہزاروں بہن بھائیوں کو اپنے ملک میں بسایا، پی کے اور وائی پی جی سمیت دہشتگردوں کیخلاف جنگ جاری رکھیں گے، لیبیا، شام، یمن سمیت جنگ زدہ علاقوں میں امن کے لیے اقوام متحدہ کردار ادا کرے۔

شاہ محمود

مزید :

صفحہ اول -