نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے  | تہذیب حافی |

نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے  | تہذیب حافی |
نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے  | تہذیب حافی |

  

نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے 

کہ اس سے ہم نے تجھے دیکھنے کی کرنی ہے 

تمام ناخدا ساحل سے دور ہو جائیں 

سمندروں سے اکیلے میں بات کرنی ہے 

ہمارے گاؤں کا ہر پھول مرنے والا ہے 

اب اس گلی سے وہ خوشبو نہیں گزرنی ہے 

وہ پھول اور کسی شاخ پر نہیں کھلنا 

وہ زُلف صرف مرے ہاتھ سے سنورنی ہے 

کسی درخت کی حدّت میں دن گزارنا ہے 

کسی چراغ کی چھاؤں میں رات کرنی ہے 

ترے زیاں پہ میں اپنا زیاں نہ کر بیٹھوں 

کہ مجھ مرید کا مرشد اویسؔ قرنی ہے 

شاعر:تہذیب حافی

(تہذیب حافی کی وال سے)

Na   Neend   Aor   Na   Khaabon  Say   Aanhk   Bharni   Hay

Keh   Iss   Say   Ham   Nay   Tujhay   Dekhnay   Ki   Karni   Hay

Tamaam   Nakhuda   Saahil   Say   Door   Ho   Jaaen

Samandaron   Say   Akailay   Men   Baat   Karni   Hay

Hamaaray   Gaaon   Ka   Har   Phool   Marnay   Waala   Hay

Ab   Iss   Gali   Say   Wo   Khushboo   Nahen   Guzarni   Hay

Wo   Phool   Aor   Kisi   Shaakh   Par   Nahen   Khilna

Wo   Zulf   Sirf    Meray   Haath   Say   Sanwarni   Hay

Kisi   Darakht   Ki   Hiddat   Men   Din   Guzaarna   Hay

Kisi   Charaagh   Ki   Chhaaon   Men   Raat   Karni   Hay

Tiray   Zayaan   Pe   Main   Apna   Zayaan   Na   Kar   Baithun

Keh   Mujh   Mureed   Ka    Murshid   AWAIS   KARNI    Hay

Poet: Tehzeeb   Hafi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -