تو نے کیا قندیل جلا دی شہزادی  | تہذیب حافی |

تو نے کیا قندیل جلا دی شہزادی  | تہذیب حافی |
تو نے کیا قندیل جلا دی شہزادی  | تہذیب حافی |

  

تو نے کیا قندیل جلا دی شہزادی 

سرخ ہوئی جاتی ہے وادی شہزادی

شیش محل کو صاف کیا ترے کہنے پر 

آئنوں سے گرد ہٹا دی شہزادی

تیرے ہی کہنے پر ایک سپاہی نے 

اپنے گھر کو آگ لگا دی شہزادی 

اب تو خواب کدے سے باہر پاؤں رکھ 

لوٹ گئے ہیں سب فریادی شہزادی 

میں تیرے دشمن لشکر کا شہزادہ 

کیسے ممکن ہے یہ شادی شہزادی 

شاعر: تہذیب حافی

(تہذیب حافی کی وال سے)

Tu   Nay   Kaya    Qindeel   Jalaa   Di   Shehzadi

Surkh   Hui   Jaati    Hay   Waadi   Shehzadi

Sheesh   Mahall   Ko Saaf   Kiya   Tiray   Kehnay   Par

Aainon   Say   Gard   Hataa   Di   Shehzadi

Teray   Hi   Kehnay   Par   Aik   Sipaahi   Nay 

Apnay   Ghar   Ko   Aag    Lagaa    Di   Shehzadi

Ab   To   Khaab   Kaday   Say   Baahar   Paaon   Rakh

Laot   Gaey   Hen   Sab   Faryaadi   Shehzadi

Main   Teray   Dushman   Lashkar   Ka   Shehzada

Kaisay   Mumkin   Hay    Yeh    Shaadi   Shehzadi

Poet: Tehzeeb   Hafi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -