آنکھوں میں سوغات سمیٹے اپنے گھر آتے ہیں  | ثروت حسین |

آنکھوں میں سوغات سمیٹے اپنے گھر آتے ہیں  | ثروت حسین |
آنکھوں میں سوغات سمیٹے اپنے گھر آتے ہیں  | ثروت حسین |

  

آنکھوں میں سوغات سمیٹے اپنے گھر آتے ہیں 

بجرے لاگے بندر گاہ پہ سوداگر آتے ہیں 

زرد زبور تلاوت کرتی ہے تصویر خزاں کی 

عین بہار میں کیسے کیسے خواب نظر آتے ہیں 

گندم اور گلابوں جیسے خواب شکستہ کرتے 

دور دراز زمینوں والے شہر میں در آتے ہیں 

شہزادی تجھے کون بتائے تیرے چراغ کدے تک 

کتنی محرابیں پڑتی ہیں کتنے در آتے ہیں 

بند قبائے سرخ کی منزل ان پر سہل ہوئی ہے 

جن ہاتھوں کو آگ چرا لینے کے ہنر آتے ہیں 

شاعر: ثروت حسین

(کلیاتِ ثروت حسین)

Aankhon   Men   Soghaat    Samaittay   Apnay   Ghar     Aatay     Hen

Bajray   Laagay    Bandargaah   Pe   Saodaagar    Aatay     Hen

Zard    ZABOOR    Tilaawat    Karti    Hay  Tasveer     Khizaan     Ki

Ain    Bahaar    Men    Kaisay    Kaisay   Khaab   Nazar   Aatay   Hen

Ganndum      Aor    Gulaabon     Jaisay   Khaab    Shakistah    Kartay

Door     Daraaz     Zameenon    Waalay    Shehr   Men   Dar   Aatay     Hen

Shehzadi    Tujhay     Kon     Batlaaey    Teray     Charaagh    Kaday   Tak

Kitni    Mehraaben     Paarrti     Hen   Hen  ,    Kitnay   Dar   Aatay   Hen

Band    Qabaa-e- Surkh    Ki   Manzil   Un   Par   Sahal   Hui   Hay

Jin    Haathon   Ko   Aag    Chura   Lenay   K    Hunar    Aatay   Hen

Poet: Sarwat    Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -