میں جو گزرا سلام کرنے لگا  | ثروت حسین |

میں جو گزرا سلام کرنے لگا  | ثروت حسین |
میں جو گزرا سلام کرنے لگا  | ثروت حسین |

  

میں جو گزرا سلام کرنے لگا 

پیڑ مجھ سے کلام کرنے لگا 

دیکھ اے نوجوان میں تجھ پر 

اپنی چاہت تمام کرنے لگا 

کیوں کسی شب چراغ کی خاطر 

اپنی نیندیں حرام کرنے لگا 

سوچتا ہوں دیارِ بے پروا 

کیوں مرا احترام کرنے لگا 

عمر یک روز کم نہیں ثروتؔ 

کیوں تلاشِ دوام کرنے لگا

شاعر: ثروت حسین

(کلیاتِ ثروت حسین)

Main   Jo    Guzra    Kalaam    Karnay    Laga

Pairr   Mujh   Say   Kalaam    Karnay    Laga

Daikh    Ay    Naojawaan   Main    Tujh   Par

Apni    Chahat    Tamaam   Karnay    Laga

Kiun    Kisi    Shab     Charaagh   Ki   Khaatir

Apni    Neendeen    Haraam    Karnay    Laga

Sochta    Hun    Diyaar -e- Beparwah

Kiun   Mira    Ehtaraam    Karnay    Laga

Umr   Yak    Roz    Kam    Nahen    SARWAT

Kiun    Talaash-e- Dawaam    Karnay    Laga

Poet: Sarwat     Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -