خالی خالی رستوں پہ بے کراں اُداسی ہے  | ثروت زہرہ |

خالی خالی رستوں پہ بے کراں اُداسی ہے  | ثروت زہرہ |
خالی خالی رستوں پہ بے کراں اُداسی ہے  | ثروت زہرہ |

  

خالی خالی رستوں پہ بے کراں اُداسی ہے 

جسم کے تماشے میں روح پیاسی پیاسی ہے 

خواب اور تمنا کا کیا حساب رکھنا ہے 

خواہشیں ہیں صدیوں کی عمر تو ذرا سی ہے 

راہ و رسم رکھنے کے بعد ہم نے جانا ہے 

وہ جو آشنائی تھی وہ تو نا شناسی ہے 

ہم کسی نئے دن کا انتظار کرتے ہیں 

دن پرانے سورج کا شام باسی باسی ہے 

دیکھ کر تمہیں کوئی کس طرح سنبھل پائے 

سب حواس جاگے ہیں ایسی بد حواسی ہے 

زخم کے چھپانے کو ہم لباس لائے تھے 

شہر بھر کا کہنا ہے یہ تو خوں لباسی ہے 

شاعرہ: ثروت زہرہ

(مختلف ادبی گروپوں سے خصوصی انتخاب)

Khaali    Khaali   Raston   Pe    Bekaraan    Udaasi   Hay

Jism   K    Tamaashay   Men    Tooh    Payaasi   Payaasi   Hay

Khaab   Aor   Tamanna   Ka   Kaya    Hisaab   Rakhna

Khaahishen    Hen    Sadiyon   Ki    Umr   To   Zaraa   Si   Hay

Raah -o- Rsm    Rakhany     K Baad    Ham    Nay     Jaana   Hay

Wo   Jo    Aashnaai    Thi   Wo   To    Nashanaasi   Hay

Ham    Kisi    Naey    Din   Ka    Intizaar    Kartay    Hen

Din    Puraanay    Sooraj    Ka    Shaam    Baasi    Baasi   Hay

Dekh   Kar   Tumhen    Koi    Kiss    Tarah    Sanbhall   Paaey

Sab    Hawaas    Jaagay    Hen    Aisi    Bad Hawaasi    Hay

Zakhm   K    Chhupaanay    Ko   Ham    Libaas    Laaey   Thay

Shehr    Bhar   Ka   Kehna    Hay   Yeh    To   Khoon   Libaasi   Hay

Poetess: Sarwat   Zehra

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -