ساز بے مطرب و مضراب نظر آتے ہیں | جاں نثار اختر |

ساز بے مطرب و مضراب نظر آتے ہیں | جاں نثار اختر |
ساز بے مطرب و مضراب نظر آتے ہیں | جاں نثار اختر |

  

ساز بے مطرب و مضراب نظر آتے ہیں

پھر بھی نغمے ہیں کہ بے تاب نظر آتے ہیں

وہی محفل ہے وہی رونقِ محفل لیکن

کتنے بدلے ہوئے آداب نظر آتے ہیں

کیا تماشہ ہے کہ غنچے تو ہیں پژمردہ و زرد

خار آسودہ و شاداب نظر آتے ہیں

قافلہ آج یہ کس موڑ پہ آ پہنچا ہے

اب قدم اور بھی بے تاب نظر آتے ہیں

کل یہی خواب حقیقت میں بدل جائیں گے

آج جو خواب فقط خواب نظر آتے ہیں

کون سا مہرِ درخشاں ہے ابھرنے والا

آئینے دل کے شفق تاب نظر آتے ہیں

مسکراتے ہوئے فردہ کے افق پر اختر

ایک کیا سیکڑوں مہتاب نظر آتے ہیں

شاعر: جاں نثار اختر

(شعری مجموعہ: جاوداں )

Saaz   Be Mutrib -o- Mizzraab   Nazar     Aatay   Hen

Phir   Bhi   Naghamy    Han   Keh    Betaab   Nazar   Aatay   Hen

Wahi   Mehfill   Hay , Wahi   Ronaq-e- Mehfill    Lekin

Kitnay   Badlay   Huay   Adaab   Nazar   Aatay   Hen

Kaya  Tamaasha   Hay   Keh   Ghunchay   To   Hen   Pazzmurda -o -Zard   

Khaar   Aalooda -o- Shadaab   Nazar   Aatay   Hen

Qaafila   Aa j   Yeh   Kiss   Morr   Pe   Aa   Pahuncha   Hay

Ab   Qadam  Aor   Bhi   Betaab   Nazar   Aatay   Hen

Kall   Yahi   Khaab   Haqeeqat   Men    Badal   Jaaen   Gay

Aaaj   Jo   Khaab   Faqat   Khaab   Nazar    Aatay   Hen

Kon   Sa   Mehr-e- Darakhshaan   Hay   Ubharnay   Waala

Aainay   Dil   K  Shafaq   Taab   Nazar   Aatay   Hen

Muskuraatay   Huay   Farda   K   Ufaq   Par   AKHTAR

Aik   Kaya    Saikarron   Mehtaab    Nazar   Aatay   Hen

Poet: Jaan  Nizaar   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -