ہو گیا شاید مرا ذوقِ تجسس کامیاب | جاں نثار اختر |

ہو گیا شاید مرا ذوقِ تجسس کامیاب | جاں نثار اختر |
ہو گیا شاید مرا ذوقِ تجسس کامیاب | جاں نثار اختر |

  

ہو گیا شاید مرا ذوقِ تجسس کامیاب

آج خود مجھ پر پڑی میری نگاہِ انتخاب

جانے کس لمحہ دمک اٗٹھے فضائے کائنات

کوئی چٹکی میں لئے ہے دیر سے طرفِ نقاب

منتظر ہیں آج بھی تیری نگاہِ شوق کے

جانے کتنے ماہ و انجم ، جانے کتنے آفتاب

تو نے دیکھا بھی نہیں اور دل دھڑکنے بھی لگا

جیسے بن چھیڑے ہوئے بجنے لگے کوئی رباب

ایک ہلکا سا تبسم ، ایک گہرا سا خُمار

ہائے وہ آنکھیں کہ تارے دیکھتے ہوں کوئی خواب

اپنے دل کا داغ محرومی چھپا سکتا نہیں

دوسرے کی روشنی سے جگمگاتا ماہتاب

سازِ مطرب کچھ نہیں ہے جامِ ساقی کچھ نہیں

زندگی ہے آپ نغمہ ، زندگی ہے خود شراب​

شاعر: جاں نثار اختر

(شعری مجموعہ: جاوداں )

Ho   Gaya   Shayad   Mira   Zoq -e-Tajassus    Kaamyaab

Aaj   Khud   Mujh   Par   Parri   Meri   Nigaah -e-Intekhaab

Jaany   Kiss   Lamha   Damak   Uthay   Fazaa-e- Kaainaat

Koi   Chuttki   Men   Liay   Hay   Der   Say   Tarf-e- Naqaab

Muntazir   Hen   Aaj   Bhi   Teri   Nigaah-e- Shoq   K

Jaanay   Kitnay   Maah-o- Anjum ,  Kitnay   Aftaab

Tu   Nay   Dekha   Bhi   Nahen   Aor   Dil   Dharraknay   Bhi   Laga

Jaisay   Bin   Chhairray    Huay   Bajnay   Lagay   Koi   Rubaab

Aik   Halk   Sa   Tabassum   ,   Aik   Gehra   Sa   Khumaar

Haaey   Wo   Aankhen   Keh   Taaray   Dekhtay   Hon   Koi    Khaab

Apnay   Dil    Ka   Daagh -e- Mehroomi   Chhupaa   Sakta   Nahen

Doosray   Ki   Raoshni   Say   Jagmagaata   Mahtaab

Saaz -e- Mutrib   Kuch   Nahen   Hay   Jaam-e- Saaqi   Kuch   Nahen

Zindagi   Hay   Aap   Naghma  ,   Zindagi   Hay   Khud   Sharaab

Poet: Jan   Nisar   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -