یہ نقشِ تصور نظاروں کے بعد | جاں نثار اختر |

یہ نقشِ تصور نظاروں کے بعد | جاں نثار اختر |
یہ نقشِ تصور نظاروں کے بعد | جاں نثار اختر |

  

یہ نقشِ تصور نظاروں کے بعد

کھلے پھول جیسے بہاروں کے بعد

نہ ساغر نہ شیشہ نہ مینا نہ مے

لٹے میکدے بادہ خواروں کے

ستارے، شفق، چاندنی، سرو، پھول

نظر تجھ پہ ٹھہری ہزاروں کے بعد

مجھے کس سہارے کی حاجت رہی

ترے دل کے نازک سہاروں کے بعد

بہت کچھ یہ ایوانِ ہستی سجا

مری فکر کے شاہکاروں کے بعد

گیا دور دورِ بہار و خزاں

بہاریں ہیں اب تو بہاروں کے بعد

شاعر: جاں نثار اختر

(شعری مجموعہ: جاوداں )

Yeh   Naqsh -e-Tasawwar    Nazaaron   K   Baad

Khilay   Phool   Jaisay   Bahaaron   K   Baad

Na   Saghar  ,  Na   Sheesha  ,  Na   Meena   Na    May

Luttay   Maikaday   Baada   Khaaron   K   Baad

Sitaaray  ,   Shafaq  ,  Chaandni  ,   Sarv  ,   Phool

Nazar   Tujh    Pe   Thehri   Hazaaron   K   Baad

Mujhay   Kiss   Sahaaray   Ki    Haajat   Rahi

Tiray   Dil   K   Naazuk   Sahaaron   K   Baad

Bahut   Kuch  Yeh    Aiwaan -e- Hasti   Sajaa

Miri   Fikr  K   Shaahkaaron   K   Baad

Gaey   Daor     Daor-e- Bahaar -o- Khizaan

Bahaaren   Hen   Ab   To   Bahaaron    K   Baad

Poet: Jan   Nisar   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -