جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا  | جاوید اختر |

جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا  | جاوید اختر |
جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا  | جاوید اختر |

  

جدھر جاتے ہیں سب، جانا ادھر اچھا نہیں لگتا 

مجھے پامال رستوں کا سفر اچھا نہیں لگتا 

غلط باتوں کو خاموشی سے سننا حامی بھر لینا 

بہت ہیں فائدے اس میں مگر اچھا نہیں لگتا 

مجھے دشمن سے بھی خودداری کی امید رہتی ہے 

کسی کا بھی ہو ،سر قدموں میں سر اچھا نہیں لگتا 

بلندی پر انہیں مٹی کی خوشبو تک نہیں آتی 

یہ وہ شاخیں ہیں جن کو اب شجر اچھا نہیں لگتا 

یہ کیوں باقی رہے آتش زنو یہ بھی جلا ڈالو 

کہ سب بے گھر ہوں اور میرا ہو گھر اچھا نہیں لگتا 

شاعر: جاوید اختر

(شعری مجموعہ: لاوا؛سال اشاعت،2011 )

Jidhar   Jatay   Hen   Sab ,   Jaana  Udhar   Achha   Nahen   Lagta

Mujhay   Pamaal   Raston    Ka   Safar   Achha   Nahen   Lagta

Ghalat   Baaton   Ko   Khaamoshi   Say   Sunna  ,  Haami   Bhar   Lena

Bahut   Say   Faaiday   Hen   Iss   Men   Magar   Achha   Nahen   Lagta

Mujhay   Dushmanon   Say   Bhi   Khuddaari   Ki   Umeed   Rehti   Hay

Kisi   Ka   Bhi   Ho   Sar  ,  Qadmon   Men   Sar    Achha   Nahen   Lagta

Bulanndi   Par   Unhen   Matti   Ki   Khushboo   Tak   Nahen   Aati

Yeh   Wo   Shaakhen  Jin   Ko   Ab   Shajar  Achha   Nahen   Lagta

Yeh   Kiun   Baaqi   Rahay   Aatish   Zano   ,  Yeh   Bhi   Jalaa   Daalo

Keh   Sab   Be  Ghar   Hon   Aor   Mera   Ho   Ghar   ,   Achha   Nahen   Lagta

 Poet: Javed   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -