کبھی کبھی میں یہ سوچتا ہوں کہ مجھ کو تیری تلاش کیوں ہے  | جاوید اختر |

کبھی کبھی میں یہ سوچتا ہوں کہ مجھ کو تیری تلاش کیوں ہے  | جاوید اختر |
کبھی کبھی میں یہ سوچتا ہوں کہ مجھ کو تیری تلاش کیوں ہے  | جاوید اختر |

  

کبھی کبھی میں یہ سوچتا ہوں کہ مجھ کو تیری تلاش کیوں ہے 

کہ جب ہیں سارے ہی تار ٹوٹے تو ساز میں ارتعاش کیوں ہے 

کوئی اگر پوچھتا یہ ہم سے بتاتے ہم گر تو کیا بتاتے 

بھلا ہو سب کا کہ یہ نہ پوچھا کہ دل پہ ایسی خراش کیوں ہے 

اٹھا کے ہاتھوں سے تم نے چھوڑا چلو نہ دانستہ تم نے توڑا 

اب الٹا ہم سے تو یہ نہ پوچھو کہ شیشہ یہ پاش پاش کیوں ہے 

عجب دو راہے پہ زندگی ہے کبھی ہوس دل کو کھینچتی ہے 

کبھی یہ شرمندگی ہے دل میں کہ اتنی فکرِ معاش کیوں ہے 

نہ فکر کوئی نہ جستجو ہے، نہ خواب کوئی نہ آرزو ہے 

یہ شخص تو کب کا مر چکا ہے تو بے کفن پھر یہ لاش کیوں ہے 

شاعر: جاوید اختر

(شعری مجموعہ: لاوا؛سال اشاعت،2011 )

Kabhi   Kabhi   Main   Yeh   Sochta   Hun   Keh   Mujh    Ko Teri   Talaash    Kiun   Hay

Keh   Jab   Hen   Saaray   Hi   Taar   Toottay   To   Saaz   Men   Irtaash   Kiun   Hay

Koi   Agar    Poochhta   Yeh   Ham   Say   Bataatay   Ham  To   Kaya   Bataatay

Bhala   Ho   Sab   Ka   Keh   Yeh   Na   Poochha   Keh   Dil   Pe    Aisi   Kharaash   Kiun   Hay

Uthaa   K   Hathon   Say   Tum   Nay   Chorra   Chalo    Na    Daansita   Tum   Nay   Chorra

Ab   Ulta   Ham   Say   To   Na   Poochho   Keh   Sheesha   Yeh   Paash   Paash   Kiun   Hay

Ajab   Doraahay   Pe   Zindagi   Hay   Kabhi   Hawas   Dil   Ko   Khainchti   Hay

Kabhi   Sharmindah   Hay   Dil   Men   Keh    Itni   Fikr -e- Muaash   Kiun   Hay

Na   Fikr   Koi   Na   Justujoo   Hay  ,   Na   Khaab   Koi   Na   Aarzoo   Hay

Yeh   Shakhs   To   Kab   Ka   Mar   Chuka   Hay   To   Be   Kafan   Phir   Yeh   Laash   Kiun   Hay

Poet: javed   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -