ہم نے ڈھونڈیں بھی تو ڈھونڈیں ہیں سہارے کیسے  | جاوید اختر |

ہم نے ڈھونڈیں بھی تو ڈھونڈیں ہیں سہارے کیسے  | جاوید اختر |
ہم نے ڈھونڈیں بھی تو ڈھونڈیں ہیں سہارے کیسے  | جاوید اختر |

  

ہم نے ڈھونڈیں بھی تو ڈھونڈیں ہیں سہارے کیسے 

ان سرابوں پہ کوئی عمر گزارے کیسے 

ہاتھ کو ہاتھ نہیں سوجھے وہ تاریکی تھی 

آ گئے ہاتھ میں کیا جانے ستارے کیسے 

ہر طرف شور اُسی نام کا ہے دنیا میں 

کوئی اس کو جو پکارے تو پکارے کیسے 

دل بجھا  , جتنے تھے ارمان سبھی خاک ہوئے 

راکھ میں پھر یہ چمکتے ہیں شرارے کیسے 

نہ تو دم لیتی ہے تو , اور نہ ہوا تھمتی ہے 

زندگی زلف تری کوئی سنوارے کیسے 

شاعر: جاوید اختر

(شعری مجموعہ: لاوا؛سال اشاعت،2011 )

Ham   Nay   Dhoonday   Bhi   To    Dhoonday    Hen   Sahaaray   Kaisay

In   Saraabon   Pe   Koi   Umr   Guzaaray   Kaisay

Haath    Ko    Haath    Nahen   Soojhay   ,   Wo   Tareeki   Thi

Aa   Gaey    Haath    Men    Kaya    Jaanay    Sitaaray   Kaisay

Har   Taraff   Shor   Usi   Naam   Ka   Hay   Dunya   Men

Koi   Uss    Ko   Jo   Pukaaray   To   Pukaaray   Kaisay

Dil   Bujha   ,   Jitnay   Thay   Armaan   Sabhi   Khaak   Huay

Raakh   Men   Phir   Yeh   Chamaktay   Hen   Sharaaray   Kaisay

Na    To   Dam   Laiti   Hay   Tu   Aor   Na    Hua   Thamti   Hay

Zindagi   Zulf    Tiri   Koi    Sanwaaray   Kasiay

Poet: Javed   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -