یہ برف زار بدن سے نہ جاں سے نکلے گا  | جاوید شاہین |

یہ برف زار بدن سے نہ جاں سے نکلے گا  | جاوید شاہین |
یہ برف زار بدن سے نہ جاں سے نکلے گا  | جاوید شاہین |

  

یہ برف زار بدن سے نہ جاں سے نکلے گا 

لہو ہو سرد تو شعلہ کہاں سے نکلے گا 

ہزار گھیرے رہے جبر کا حصارِ سیہ 

کہ بابِ‌ راہِ اماں درمیاں سے نکلے گا 

جو تلخ حرف پسِ لب ہے عام بھی ہوگا 

چڑھا ہے تیر تو آخر کماں سے نکلے گا 

جو پیڑ پھل نہیں دیتے وہ کاٹتے جاؤ 

خزاں کا زہر یوں ہی گلستاں سے نکلے گا 

ذرا چلے تو سہی پانیوں پہ تیز ہوا 

کھڑا سفینہ کھلے بادباں سے نکلے گا 

کوئی تو کام لو غم سے رگیں ہی چمکاؤ 

جلیں گی شمعیں اندھیرا مکاں سے نکلے گا 

کھلے ہیں راستوں کے بھید تو سمجھ شاہیںؔ 

یہ کارواں سفر رائیگاں سے نکلے گا 

شاعر: جاوید شاہین

(شعری مجموعہ: زخمِ مسلسل کی ہری شاخ)

Yeh   Barf   Zaar   Badan   Say   Na   Jaan   Say   Nikaly   Ga

Lahu   Ho    Sard   To   Shola   Kahan   Say   Nikaly   Ga

Hazaar   Ghairay   Rahay   Jabr   Ka   Hasaar-e- Siyah

Keh    Baab-e-Raah-e- Amaan   Darmiyaan   Say   Nikaly   Ga

Jo   Talkh   Harf    Pas-e- Lab   Hay  Aam   Bhi   Ho   Ga

Charrha   Hay   Teer   To  Aakhir   Kamaan   Say   Nikaly   Ga

Jo   Pair   Phall    Nahen    Detay   Wo   Kaattay   Jaao

Khazaan   Ka   Zehr  Yun   Hi   Gulsitaan   Say   Nikaly   Ga

Zara   Chalay   To   Sahi   Paanion   Pe    Taiz   Hawaa

Kharra   Safeena   Khulay   Baadbaan   Say   Nikaly   Ga

Koi   To   Kaam   Lo   Gham  Say   Ragen   Hi   Garmaao

Jalen   Gi   Shamen   Andhaira   Makaan   Say   Nikaly   Ga

Khula y   Raaston   K   Bhaid   To   Samajh   SHAHEEN

Yeh   Karvaan   Safar -e- Raaigaan   Say   Nikaly   Ga

Poet: Javed   Shaheen

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -