دامانِ شب میں چاند کا منظر بھی دیکھ لے  | جاوید شاہین |

دامانِ شب میں چاند کا منظر بھی دیکھ لے  | جاوید شاہین |
دامانِ شب میں چاند کا منظر بھی دیکھ لے  | جاوید شاہین |

  

دامانِ شب میں چاند کا منظر بھی دیکھ لے 

سونے سے پہلے کمرے سے باہر بھی دیکھ لے 

ان موسموں کی راہ میں یوں بے خبر نہ بیٹھ 

رہتا ہے کون کون سفر پر بھی دیکھ لے 

گم سم رکھے گی تجھ کو کہاں تک وہ ایک یاد 

منہ سے ہٹا کے میلی سی چادر بھی دیکھ لے 

دھندلا رہی ہے دیر سے شمع بدن کی لو 

کوئی غبار سانس کے اندر بھی دیکھ لے 

آباد زیر آب ہیں ڈوبے ہوئے نگر 

یادوں کے پانیوں میں اتر کر بھی دیکھ لے 

فرصت ملے تو کھول چھپے خواہشوں کے راز 

گنجان جنگلوں سے گزر کر بھی دیکھ لے 

شاہیںؔ بدن بھی زیر کیا جاں بھی زیر کر 

دشتِ بلا سے آگے سمندر بھی دیکھ لے 

شاعر: جاوید شاہین

(شعری مجموعہ: زخمِ مسلسل کی ہری شاخ)

Damaan -e- Shab   Men   Chaand   Ka   Manzar   Bhi   Dekh   Lay

Sonay   Say    Pehlay    Kamray   Say    Baahar   Bhi   Dekh   Lay

In    Mosmon   Ki   Raah   Men   Yun   BeHunar   Na   Baith

Rehta   Hay   Kon   Kon    Safar    Par    Bhi   Dekh   Lay

Gum   Sum   Rakhay   Gi   Tujh   Ko   Kahan   Tak   Wo   Aik   Yaad

Munh   Say    Hataa   K   Maili   Si   Chaadar   Bhi   Dekh   Lay

Dhundla   Rahi   Hay   Kiss   Liay   Shama -e- Badan   Ki   Lao

Koi   Ghubaar   Saans   K   Andar   Bhi   Dekh   Lay

Aabaad   Zer-e- Aaab   Hen   Doobay   Huay   Nagar

Yaadon   K    Paanion   Men   Utar   Kar   Bhi   Dekh   Lay

Fursat   Milay   To   Khol   Chhupi   Khaahishon   K   Raaz

Gunjaan   Jangalon   Say   Guzar   Kar   Bhi   Dekh   Lay

SHAHEEN   Badan   To   Zer   Kiya   Jaan   Bhi   Zer   Kar

Dasht-e- Balaa   Say   Aagay   Samandar    Bhi   Dekh   Lay

Poet: Javed   Shaheen

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -