بگولے بہت ہیں مری گھات میں  | جاوید شاہین |

بگولے بہت ہیں مری گھات میں  | جاوید شاہین |
بگولے بہت ہیں مری گھات میں  | جاوید شاہین |

  

بگولے بہت ہیں مری گھات میں 

گھرا ہوں عجب دشتِ حالات میں 

کبھی خوں سے رنگیں بھی ہو چشمِ تر 

دھنک بھی نظر آئے برسات میں 

کسی درد کی آنچ دے کر پرکھ 

چمکتی ہے اک شے مری ذات میں 

لکیروں کا ہر سلسلہ بے کراں 

کھلے پانیوں کا سفر ہات میں 

وہی تیری آنکھوں کے حیرت کدے 

وہی میں جہانِ طلسمات میں 

کبھی گھر کی بیمار ضو سے نکل 

ذرا گھوم پھر چاندنی رات میں 

بچھا ہے کہیں ذہن میں دام سا 

پھڑکتا ہے کوئی خیالات میں 

بجا نرمیِ لفظ شاہیںؔ مگر 

لیے پھر کوئی سنگ بھی ہات میں 

شاعر: جاوید شاہین

(شعری مجموعہ: زخمِ مسلسل کی ہری شاخ)

Bigolay     Bahut    Hen    Miri    Ghaat    Men

Ghira    Hun    Ajab   Dasht-e -Halaat   Men

Kabhi   Khoon   Say    Rangeen   Bhi   Ho   Chashm-e- Tar

Dhanak   Bhi    Nazar    Aaey    Barsaat    Men

Kisi   Dard    Ki    Aanch    Day    Kar   Parakh

Chamakti    Hay    Ik    Shaey   Miri    Zaat   Men

Lakeeron    Ka    Har   Silsila   Be   Karaan

Khulay    Paanion    Ka    Safar    Haat   Men

Wahi   Teri   Aankhon   K   Hairat   Kaday

Wahi   Main    Jahaan-e- Talismaat   Men

Kabhi    Ghar    Ki    Bemaar    Zao    Say    Nikal

Zara     Ghoom    Phir     Chaandni    Raat    Men

Bichha    Hay    Kahen    Zehn    Men   Daam   Sa

Pharrakta    Hay   Koi    Khayalaat   Men

Bajaa    Narmi -e- Lafz    SHAHEEN   Magar

Liay    Phir    Koi    Sang    Bhi    Haat    Men

Poet: Javed    Shaheen

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -