جو روئیں دردِ دل سے تلملا کر  | جرأت قلندر بخش |

جو روئیں دردِ دل سے تلملا کر  | جرأت قلندر بخش |
جو روئیں دردِ دل سے تلملا کر  | جرأت قلندر بخش |

  

جو روئیں دردِ دل سے تلملا کر 

تو وہ ہنستا ہے کیا کیا کھلکھلا کر 

یہی دیکھا کہ اٹھوائے گئے بس 

جو دیکھا ٹک اُدھر کو آنکھ اٹھا کر 

بھلا دیکھیں یہ کن آنکھوں سے کیوں جی 

کسی کو دیکھنا ہم کو دکھا کر 

کھڑا رہنے نہ دیں وہ اب کہ جو شخص 

اٹھاتے تھے مزے ہم کو بٹھا کر 

گیا وہ دل بھی پہلو سے کہ جس کو 

کبھی روتے تھے چھاتی سے لگا کر 

چلی جاتی ہے تو اے عمرِ رفتہ 

یہ ہم کو کس مصیبت میں پھنسا کر 

خط آیا واں سے ایسا جس سے اپنا 

نوشتہ خوب سمجھے ہم پڑھا کر

ابھی گھر سے نہیں نکلا وہ تس پر 

چلا گھر بار اک عالم لٹا کر 

دیا دھڑکا اسے کچھ وصل میں ہائے 

بگاڑی بات گردوں نے بنا کر 

محبت ان دنوں  جو  گھٹ گئی واں 

تو کچھ پاتے نہیں اس پاس جا کر 

مگر ہم شوق کے غلبے سے ہر بار 

خجل ہوتے ہیں ہاتھ اپنا بڑھا کر 

نہیں منہ سے نکلتی اس کے کچھ بات 

کسی نے کیا کہا جرأت سے آ      کر 

شاعر: جرأت قلندر بخش

(دیوانِ جرأت: سالِ اشاعت،1912)

Jo     Rotay   Hen    Dard-e- Dil   Say   Tilmilaa   Kar 

To   Wo    Hansta   Hay    Kaya    Kaya    Khilkhilaa   Kar

Yahi   Dekha   Keh   Uthwaaey   Gay   Bass

Jo   Dekha   Tukk   Udhar   Ko   Ankh   Uthaa   Kar 

Bhalaa   Dekhen   Yeh   Kin   Aankhon   Say   Kiun    Ji

Kisi   Ko   Dekhna   Ham   Ko   Dikhaa   Kar

Kharra   Rehnay   Den   Wo   Ab   Keh   Jo   Shakhs

Uthaatay   Thay   Mazay   Ham   Ko    Bithaa   Kar

Gaya   Wo    Dil   Bhi   Pehlu   Say   Keh   Jiss   Ko

Kabhi    Rotay   Thay   Chaati   Say   Lagaa   Kar

Chali   Jaati   Hay   To   Ay   Umr-e- Rafta

Yeh   Ham   Ko   Kiss    Museebat   Men   Phansaa   Kar

Khat   Aya   Waan   Say   Aisa   Jiss   Say   Apna

Nawashta   Khoob   Samjhay   Ham   Parrhaa   Kar

Abhi   Ghar   Say   Nahen   Nikla   Wo   Tass   Par

Chalaa   Ghar   Baar   Ik    Aalam    Lutaa   Kar 

Diya   Dharrka   Usay    Kuchh   Wasl   Men   Haaey

Bigaarri   Baat    Gardoon   Nay   Banaa   Kar

Muhabbat    In    Dinon   Jo   Ghatt   Gai   Waan

To   Kuchh   Paatay   Nahen   Uss    Paas    Jaa   Kar

Magar   Ham   Shoq   K   Ghalbay   Say   Har   Baar

Khajill   Hotay   Hen   Haath   Apna   Barrhaa   Kar

Nahen   Munh   Say   Nikalti   Uss   Say   Kuch   Baat

Kisi    Nay   Kaya   Kaha   JURAT   Say   Aa   Kar

Poet: Jurat    Qalandar    Bakhsh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -