شہباز فیملی کیخلاف منی لانڈرنگ کے معاملے میں بینکرزکے بیانات ریکارڈ کرانے کی درخواست واپس لے لی گئی 

شہباز فیملی کیخلاف منی لانڈرنگ کے معاملے میں بینکرزکے بیانات ریکارڈ کرانے ...
شہباز فیملی کیخلاف منی لانڈرنگ کے معاملے میں بینکرزکے بیانات ریکارڈ کرانے کی درخواست واپس لے لی گئی 

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن)ضلع کچہری میں شہباز شریف فیملی کے خلاف منی لانڈرنگ سے متعلق کیس میں بینکرز کے بیانات ریکارڈ کرانے سے متعلق درخواست واپس لے لی گئی ۔

ضلع کچہری میں ایف آئی اے کی جانب سے کہا گیا کہ پتہ لگا ہے کہ نجی بینک بینکرز کو ہراساں کر رہا ہے ، بینک کی جانب سے بینکرز کو رضا کارانہ بیانات دینے سے روک دیا گیا ہے ،  عاصم سوری کو اسی وجہ سے گرفتار کیا گیا ہے ،  عاصم سوری کی جانب سے بینکرز کو ہراساں کرنےکے ٹھوس شواہد ملے ہیں ، ملزم کے موبائل فون  سے ریکارڈ سامنےآچکا ہے ، ملزم نے شہباز شریف اور حمزہ شہباز کا نام چھپانے کیلئے بینکرز پر دباؤ ڈالا ، بینکرز شہباز شریف کا نام لے لیتے تو جعلی اکاؤنٹس  ثابت ہو جاتے ۔

ایف آئی اے نے عدالت کو بتایا کہ معلومات سامنے آجاتیں تو  بینک کی منی لانڈرنگ کیس میں ملی بھگت بھی سامنے آجاتی ، عاصم سوری نے ملازمین کو ہراساں کرنے کیلئے واٹس ایپ گروپ بنایا، کہا گیا کہ اگر بینکرز نے منہ کھولا تو بینکرز کے خلاف کارروائی ہوگی، عاصم سوری ،اظہر محمود کے خلاف کارروائی شروع کی گئی ، رضاکارانہ بیانات ریکارڈ کرنےکیلئے بینک کو ہدایات جاری کیں ، بینک کی ٹاپ مینجمنٹ بینکرز کو ہراساں  کرنا بند کرے،بینک مینجمنٹ گواہوں کو دھمکائے نہ ہی ایکشن لے ۔

مزید :

قومی -جرم و انصاف -