امریکہ کاافغانستان میں اپنی فوج کے با رے متعدد آ پشنز پر غور شروع

امریکہ کاافغانستان میں اپنی فوج کے با رے متعدد آ پشنز پر غور شروع

  

واشنگٹن (آن لائن) امریکی حکومت نے رواں برس کے اختتام پر افغانستان میں امریکی فوجیوں کے قیام یا انخلاء سے متعلق حتمی فیصلے با رے متعدد آ پشنز پر غور شروع کر دیا ۔ ایک اعلیٰ امریکی عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر امریکی خبر رساں ادارے کو بتایا کہ اوباما انتظامیہ نے امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون سے افغانستان میں امریکی فوج کے مستقبل کے حوالے سے نئے آپشنز کا کہا ہے۔

 اس عہدیدار کا کہنا تھا کہ اوباما انتظامیہ نے اس سلسلے میں ہدایات دی ہیں کہ افغانستان میں زیرو تا دس ہزار فوجیوں کے قیام سے متعلق تجاویز دی جائیں۔ واشنگٹن انتظامیہ اس وقت اس بحث میں مصروف ہے کہ افغانستان کی سلامتی اور امن کے لیے رواں برس کے اختتام پر کتنے امریکی فوجیوں کی موجودگی ضروری ہے۔ خیال رہے کہ 31 دسمبر کو افغانستان میں نیٹو کا فوجی مشن اختتام پذیر ہو رہا ہے، تاہم امریکا کی خواہش ہے کہ رواں برس کے بعد بھی کچھ امریکی فوجی افغانستان میں تعینات رہیں، جو افغان فوجیوں کی تربیت اور مشاورت کے علاوہ کچھ مخصوص حالات میں انسداد دہشت گردی آپریشنز میں مقامی فورسز کی معاونت کریں۔ اس حوالے سے امریکی حکومت میں دو مختلف آراء پائی جاتی ہیں، جن میں ایک طرف تو اعلیٰ فوجی قیادت ہے، جس کا خیال ہے کہ افغانستان میں سلامتی کی صورتحال قائم رکھنے کے لیے بڑی تعداد میں امریکی فوجیوں کی ضرورت ہو گی۔ تاہم دوسری جانب واشنگٹن انتظامیہ کے چند اعلیٰ عہدیدار سمجھتے ہیں کہ افغان فورسز صلاحیت کے اعتبار سے خاصی بہتر ہو چکی ہیں اور اب افغانستان میں زیادہ امریکی فوجیوں کی ضرورت نہیں۔اس سے قبل امریکی اور نیٹو ممالک کا منصوبہ تھا کہ رواں برس کے بعد افغانستان میں آٹھ ہزار تا بارہ ہزار فوجی تعینات رہنا چاہیے، جو افغان فورسز کی تربیت اور مشاورت کا کام انجام دیں اور انسداد دہشت گردی کی کارروائیوں میں بھی شریک ہوں۔ تاہم اس باہمی سکیورٹی معاہدے پر افغان صدر حامد کرزئی نے دستخط کرنے سے انکار کر دیا تھا۔صدر کرزئی کا موقف ہے کہ نیا منتخب افغان صدر اس معاہدے پر دستخط کے حوالے سے حتمی فیصلہ کرے گا۔ واضح رہے کہ صدر کرزئی دو مرتبہ عہدہ صدارت پر براجمان رہنے کے بعد اب رخصت ہو رہے ہیں، جب کہ رواں ماہ کے آغاز پر ہونے والے صدارتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں ڈالے جانے والے ووٹوں کی گنتی جاری ہے۔ دستور کے مطابق صدر کرزئی تیسری مدت کے لیے عہدہ صدارت کے امیدوار نہیں ہو سکتے۔

مزید :

عالمی منظر -